Khud Kalami

خود کلامی:
کیا ضروری ہے کہ ہم فون پہ باتیں بھی کریں
کیا ضروری ہے کہ ہر لفظ مہکنے بھی لگے
کیا ضروری ہے کہ ہر زخم سے خوشبو آئے
کیا ضروری ہے وفادار رہیں ہم دونوں
کیا ضروری ہے دوا ساری اثر کر جائے
کیا ضروری ہے کہ ہر خواب ہم اچھا دیکھیں
کیا ضروری ہے کہ جو چاہیں وہی ہو جائے
کیا ضروری ہے کہ موسم ہو ہمارا ساتھی
کیا ضروری ہے سفر میں کہیں سایہ بھی ملے
کیا ضروری ہے تبسم یوں ہی موجود رہے
کیا ضروری ہے ہر اک راہ میں جگنو چمکیں
کیا ضروری ہے کہ اشکوں کو روانی بھی ملے
کیا ضروری ہے کہ ملنا ہی مقدر ٹھہرے
کیا ضروری ہے کہ ہر روز ملیں ہم دونوں
ہم جہاں گاؤں بسائیں وہاں اک جھیل بھی ہو
کیا ضروری ہے محبت تری تکمیل بھی ہو
Khud Kalami:
kya zaruri hai ki hum phone pe baaten bhi karen
kya zaruri hai ki har lafz mahakne bhi lage
kya zaruri hai ki har zakhm se khushbu aae

kya zaruri hai wafadar rahen hum donon
kya zaruri hai dawa sari asar kar jae

kya zaruri hai ki har khwab hum achchha dekhen
kya zaruri hai ki jo chahen wahi ho jae

kya zaruri hai ki mausam ho hamara sathi
kya zaruri hai safar mein kahin saya bhi mile
kya zaruri hai tabassum yunhi maujud rahe

kya zaruri hai har ek rah mein jugnu chamkin
kya zaruri hai ki ashkon ko rawani bhi mile
kya zaruri hai ki milna hi muqaddar Thahre

kya zaruri hai ki har roz milen hum donon
hum jahan ganw basaen wahan ek jhil bhi ho
kya zaruri hai mohabbat teri takmil bhi ho

اپنا تبصرہ بھیجیں