Saza

سزا
ہر بار میرے سامنے آتی رہی ہو تم
ہر بار تم سے مل کے بچھڑتا رہا ہوں میں
تم کون ہو یہ خود بھی نہیں جانتی ہو تم
میں کون ہوں یہ خود بھی نہیں جانتا ہوں میں
تم مجھ کو جان کر ہی پڑی ہو عذاب میں
اور اس طرح خود اپنی سزا بن گیا ہوں میں
تم جس زمین پر ہو میں اس کا خدا نہیں
پس سر بسر اذیت و آزار ہی رہو
بیزار ہو گئی ہو بہت زندگی سے تم
جب بس میں کچھ نہیں ہے تو بیزار ہی رہو
تم کو یہاں کے سایہ و پرتو سے کیا غرض
تم اپنے حق میں بیچ کی دیوار ہی رہو
میں ابتدائے عشق سے بے مہر ہی رہا
تم انتہائے عشق کا معیار ہی رہو
تم خون تھوکتی ہو یہ سن کر خوشی ہوئی
اس رنگ اس ادا میں بھی پرکار ہی رہو
میں نے یہ کب کہا تھا محبت میں ہے نجات
میں نے یہ کب کہا تھا وفادار ہی رہو
اپنی متاع ناز لٹا کر مرے لیے
بازار التفات میں نادار ہی رہو
جب میں تمہیں نشاط محبت نہ دے سکا
غم میں کبھی سکون رفاقت نہ دے سکا
جب میرے سب چراغ تمنا ہوا کے ہیں
جب میرے سارے خواب کسی بے وفا کے ہیں
پھر مجھ کو چاہنے کا تمہیں کوئی حق نہیں
تنہا کراہنے کا تمہیں کوئی حق نہیں
Saza:
har bar mere samne aati rahi ho tum
har bar tum se mil ke bichhadta raha hun main
 
tum kaun ho ye khud bhi nahin jaanti ho tum
main kaun hun ye khud bhi nahin jaanta hun main
 
tum mujh ko jaan kar hi padi ho azab mein
aur is tarah khud apni saza ban gaya hun main
 
tum jis zamin par ho main us ka khuda nahin
pas sar-ba-sar aziyyat o aazar hi raho
 
bezar ho gai ho bahut zindagi se tum
jab bas mein kuchh nahin hai to bezar hi raho
 
tum ko yahan ke saya o partaw se kya gharaz
tum apne haq mein bich ki diwar hi raho
 
main ibtida-e-ishq se be-mehr hi raha
tum intiha-e-ishq ka mear hi raho
 
tum khun thukti ho ye sun kar khushi hui
is rang is ada mein bhi purkar hi raho
 
main ne ye kab kaha tha mohabbat mein hai najat
main ne ye kab kaha tha wafadar hi raho
 
apni mata-e-naz luta kar mere liye
bazar-e-iltifat mein nadar hi raho
 
jab main tumhein nashat-e-mohabbat na de saka
gham mein kabhi sukun-e-rifaqat na de saka
 
jab mere sab charagh-e-tamanna hawa ke hain
jab mere sare khwab kisi bewafa ke hain
 
phir mujh ko chahne ka tumhein koi haq nahin
tanha karahne ka tumhein koi haq nahin

اپنا تبصرہ بھیجیں