Wafa Ka Ehd Tha Dil Ko Sambhaalne Ke Liye

شاعر:احسان دانش
غزل
وفا کا عہد تھا دل کو سنبھالنے کے لئے
وہ ہنس پڑے مجھے مشکل میں ڈالنے کے لئے

بندھا ہوا ہے بہاروں کا اب وہیں تانتا
جہاں رکا تھا میں کانٹے نکالنے کے لئے

کوئی نسیم کا نغمہ کوئی شمیم کا راگ
فضا کو امن کے قالب میں ڈھالنے کے لئے

خدا نہ کردہ زمیں پاؤں سے اگر کھسکی
بڑھیں گے تند بگولے سنبھالنے کے لئے

اتر پڑے ہیں کدھر سے یہ آندھیوں کے جلوس
سمندروں سے جزیرے نکالنے کے لئے

ترے سلیقۂ ترتیب نو کا کیا کہنا
ہمیں تھے قریۂ دل سے نکالنے کے لئے

کبھی ہماری ضرورت پڑے گی دنیا کو
دلوں کی برف کو شعلوں میں ڈھالنے کے لئے

یہ شعبدے ہی سہی کچھ فسوں گردوں کو بلاؤ
نئی فضا میں ستارے اچھالنے کے لئے

ہے صرف ہم کو ترے خال و خد کا اندازہ
یہ آئنہ تو ہیں حیرت میں ڈالنے کے لئے

نہ جانے کتنی مسافت سے آئے گا سورج
نگار شب کا جنازہ نکالنے کے لئے

میں پیش رو ہوں اسی خاک سے اگیں گے چراغ
نگاہ و دل کے افق کو اجالنے کے لئے

فصیل شب سے کوئی ہاتھ بڑھنے والا ہے
فضا کی جیب سے سورج نکالنے کے لئے

کنوئیں میں پھینک کے پچھتا رہا ہوں اے دانشؔ
کمند تھی جو مناروں پر ڈالنے کے لئے
 

 

Ghazal

Wafa Ka Ehd Tha Dil Ko Sambhaalne Ke Liye
Wo hans pade mujhe mushkil mein dalne ke liye

Bandha hua hai bahaaron ka ab wahin tanta
Jahan ruka tha main kante nikalne ke liye

Koi nasim ka naghma koi shamim ka rag
Faza ko amn ke qalib mein dhaalne ke liye

Khuda na karda zamin panw se agar khiski
Badhenge tund bagule sambhaalne ke liye

Utar pade hain kidhar se ye aandhiyon ke julus
Samundaron se jazire nikalne ke liye

Tere saliqa-e-tartib-e-nau ka kya kahna
Hamin the qarya-e-dil se nikalne ke liye

Kabhi hamari zarurat padegi duniya ko
Dilon ki barf ko shoalon mein dhaalne ke liye

Ye shoabde hi sahi kuchh fusun-garon ko bulao
Nai faza mein sitare uchhaalne ke liye

Hai sirf hum ko tere khal-o-khad ka andaza
Ye aaine tu hain hairat mein dalne ke liye

Na jaane kitni masafat se aaega suraj
Nigar-e-shab ka janaza nikalne ke liye

Main pesh-rau hun isi khak se ugenge charagh
Nigah-o-dil ke ufuq ko ujalne ke liye

Fasil-e-shab se koi hath badhne wala hai
Faza ki jeb se suraj nikalne ke liye

Kunen mein phenk ke pachhta raha hun ai ‘danish’
Kamand thi jo minaron par dalne ke liye

اپنا تبصرہ بھیجیں