Kharaa Qalai Mein Aur Ungliyon Mein Moh-E-Najaf

Kharaa Qalai Mein Aur Ungliyon Mein Moh-E-Najaf

Kharaa Qalai Mein Aur Ungliyon Mein Moh-E-Najaf
Zuban peh nad-e-ali aur rooh aansowon-e-najaf

Issi liye to baghal gari hoye chhora nahi
Keh aarahi thi mujhe uss badan se boo-e-najaf

Woh jin ke aur maqasid thay kia bana un ka
Hamein bahisht mein le aai aarzo-e-najaf

Yeh shair, shair nahi hai ataa hai maula ki
Yeh behh rahi hain mere simt aab jo-e-najaf

Mujhe talab se ziyada aata howa najmi
Bahisht mangi thi aur mil gaya hai kuwan-e-najaf

Kharaa qalai mein aur ungliyon mein moh-e-najaf
Zuban peh nad-e-ali aur rooh aansowon-e-najaf
غزل
کڑا قلائی میں اور اُنگلیوں میں موہِ نجف
زبان پہ نادِ علی اور روحِ آنسوؤںِ نجف

اِسی لئے تو بغل گیر ہوئے چھوڑا نہیں
کہ آرہی تھی مجھے اُس بدن سے بُوء نجف

وہ جن کے اور مقاصد تھے کیا بنا اُن کا
ہمیں بہشتِ میں لے آئی آرزوء نجف

یہ شعر، شعر نہیں ہے عطا ہے مولا کی
یہ بہہ رہی ہیں میرے سمت آب جوء نجف

مجھے طلب سے زیادہ عطا ہوا نجمی
بہشت مانگی تھی اور مل گیا ہے کنواںء نجف

کڑا قلائی میں اور اُنگلیوں میں موہِ نجف
زبان پہ نادِ علی اور روحِ آنسوؤںِ نجف
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں