Kia Be Morawwati Ka Shikwa Gila Kisi Se

Kia Be Morawwati Ka Shikwa Gila Kisi Se

Kia Be Morawwati Ka Shikwa Gila Kisi Se
Khud hum ne kab wafa ki apne siwa kisi se

Uss hath se wasooli iss hath se adai
Pohuncha diya kisi ko jo kuchh mila kisi se

Malom hai hamein hum kitne parhe likhay hain
Yeh sun liya kisi se woh sun liya kisi se

Uss dour mein kahan yeh aazadi amal thi
Chori chhupay hamara tha silsila kisi se

Sab aik dosray ki har baat jante hain
Makhfi nahi kisi ka achha bura kisi se

Tum hi khuloos dil se aa jate ho shaoor ab
Milta hai kon warna be faida kisi se

Kia be morawwati ka shikwa gila kisi se
Khud hum ne kab wafa ki apne siwa kisi se
غزل
کیا بے مروتی کا شکوہ گلہ کسی سے
خود ہم نے کب وفا کی اپنے سوا کسی سے

اُس ہاتھ سے وصولی اِس تھا سے ادائی
پہنچا دیا کسی کو جو کچھ ملا کسی سے

معلوم ہے ہمیں ہم کتنے پڑھے لکھے ہیں
یہ سن لیا کسی سے وہ سن لیا کسی سے

اس دور میں کہاں یہ آزادی عمل تھی
چوری چھپے ہمارا تھا سلسلہ کسی سے

سب ایک دوسرے کی ہر بات جانتے ہیں
مخفی نہیں کسی کا اچھا برا کسی سے

تم ہی خلوص دل سے آ جاتے ہو شعور اب
ملتا ہے کون ورنہ بے فائدہ کسی سے

کیا بے مروتی کا شکوہ گلہ کسی سے
خود ہم نے کب وفا کی اپنے سوا کسی سے

اپنا تبصرہ بھیجیں