Chaman Mein Aap Ki Tarah Gulab Ek Bhi Nahin

غزل
چمن میں آپ کی طرح گلاب ایک بھی نہیں
حضور ایک بھی نہیں جناب ایک بھی نہیں

مباحثوں کا ماحصل فقط خلش فقط خلل
سوال ہی سوال ہیں جواب ایک بھی نہیں

ادھر کسی سے کچھ لیا ادھر کسی کو دے دیا
چنانچہ واجب الادا حساب ایک بھی نہیں

کتب کے ڈھیر میں نہ ہو صحیفہ ذکر یار کا
تو قابل مطالعہ کتاب ایک بھی نہیں

قوی بھی ہے ضعیف بھی ہمارا حافظہ شعورؔ
مزے تمام یاد ہیں عذاب ایک بھی نہیں
Ghazal
Chaman Mein Aap Ki Tarah Gulab Ek Bhi Nahin
Huzur ek bhi nahin janab ek bhi nahin

Mubahison ka ma-hasal faqat khalish faqat khalal
Sawal hi sawal hain jawab ek bhi nahin

Idhar kisi se kuchh liya idhar kisi ko de diya
Chunanche wajib-ul-ada hisab ek bhi nahin

Kutub ke Dher mein na ho sahifa zikr-e-yar ka
To qabil-e-mutalia kitab ek bhi nahin

Qawi bhi hai zaif bhi hamara hafiza ‘shuur’
Maze tamam yaad hain azab ek bhi nahin

اپنا تبصرہ بھیجیں