Kuch Wazahat Na Iltija Kijiye

Ghazal
Kuch Wazahat Na Iltija Kijiye
Such kaha hai tou hosla kijiye

Hum ne maana keh mohtabir hai demag
Dil na manay agar to kia kijiye

Aap bhi tou yahi pe rehte hain
Khud ko bhi waqt kuch diya kijiye

Karna chahain jo sheher ki tameer
Apne hi ghar se ibtada kijiye

Dil na dunya se haar maane kabhi
Mere haq mein yeh dua kijiye

Ainay toot kar nahi jortay
Dosto ko youn khafa na kijiye

Lafz se bhi kharash parti hai
Tabsara soch kar kijiye

Jhoot se bhi bura hai aadhaa such
Es se behtar hai chup raha kijiye
غزل
کچھ وضاحت نہ التجا کیجئے
سچ کہا ہے تو حوصلہ کیجئے

ہم نے مانا کہ معتبر ہے دماغ
دل نہ مانے اگر تو کیا کیجئے

آپ بھی تو یہی پہ رہتے ہیں
خود کو بھی وقت کچھ دیا کیجئے

کرنا چاہیں جو شہر کی تعمیر
اپنے ہی گھر سے ابتدا کیجئے

دل نہ دنیا سے ہار مانے کبھی
میرے حق میں یہی دعا کیجئے

آئینے ٹوٹ کر نہیں جُڑتے
دوستوں کو یوں نہ خفا کیجئے

لفظ سے بھی خراش پڑتی ہے
تبصرہ سوچ کر کیجئے

جھوٹ سے بھی برا ہے آدھا سچ
اس سے بہتر ہے چپ رہا کیجئے

اپنا تبصرہ بھیجیں