Bichhar Gaye To Yeh Dil Umar Bhar Lagay Ga Nahi

Bichhar Gaye To Yeh Dil Umar Bhar Lagay Ga Nahi

Bichhar Gaye To Yeh Dil Umar Bhar Lagay Ga Nahi
Lagay ga lagnay laga hai magar lagay ga nahi

Nahi lagay ga usay dekh kar magar khush hai
Mein khush nahi hoon magar dekh kar lagay ga nahi

Hamaray dil ko abhi mustaqil pata nah bana
Hamein pata hai tera dil idhar lagay ga nahi

Junoon ka hajam ziyada tumhara zarf hai kam
Zara sa gamla hai iss mein shajar lagay ga nahi

Aik aisa zakhm numa dil qareeb se guzra
Dil uss ko dekh ke cheekha thehra lagay ga nahi

Junoon se kand kiya hai so uss ke husan ka keel
Mere siwa kisi deewar par lagay ga nahi

Bohat tawajah talluq bigarr deti hai
Zyada darnay lagen gay to dar lagay ga nahi

Bichhar gaye to yeh dil umar bhar lagay ga nahi
Lagay ga lagnay laga hai magar lagay ga nahi
غزل
بچھڑ گئے تو یہ دل عمر بھر لگے گا نہیں
لگے گا لگنے لگا ہے مگر لگے گا نہیں

نہیں لگے گا اُسے دیکھ کر مگر خوش ہے
میں خوش نہیں ہوں مگر دیکھ کر لگے گا نہیں

ہمارے دل کو ابھی مستقل پتا نہ بنا
ہمیں پتا ہے ترا دل اِدھر لگے گا نہیں

جنوں کا حجم زیادہ تمہارا ظرف ہے کم
ذرا سا گملا ہے اِس میں شجر لگے گا نہیں

ایک ایسا زخم نما دل قریب سے گزرا
دل اُس کو دیکھ کے چیخا ٹھہر لگے گا نہیں

جنوں سے کند کیا ہے سو اُس کے حسن کا کیل
مرے سوا کسی دیوار پرلگے گا نہیں

بہت توجہ تعلق بگاڑ دیتی ہے
زیادہ ڈرنے لگیں گے تو ڈر لگے گا نہیں

بچھڑ گئے تو یہ دل عمر بھر لگے گا نہیں
لگے گا لگنے لگا ہے مگر لگے گا نہیں
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں