Pas.E.Aaina

پس آئینہ
مجھے جمال بدن کا ہے اعتراف مگر
میں کیا کروں کہ ورائے بدن بھی دیکھتا ہوں
یہ کائنات فقط ایک رخ نہیں رکھتی
چمن بھی دیکھتا ہوں اور بن بھی دیکھتا ہوں
مری نظر میں ہیں جب حسن کے تمام انداز
میں فن بھی دیکھتا ہوں فکر و فن بھی دیکھتا
ہوں
نکل گیا ہوں فریب نگاہ سے آگے
میں آسماں کو شکن در شکن بھی دیکھتا ہوں
وہ آدمی کہ سبھی روئے جن کی میت پر
میں اس کو زیر کفن خندہ زن بھی دیکھتا ہوں
میں جانتا ہوں کہ خورشید ہے جلال مآب
مگر غروب سے خود کو رہائی دیتا نہیں
میں سوچتا ہوں کہ چاند اک جمال پارہ ہے
مگر وہ رخ جو کسی کو دکھائی دیتا نہیں
میں سوچتا ہوں حقیقت کا یہ تضاد ہے کیا
خدا جو دیتا ہے سب کچھ خدائی دیتا نہیں
وہ لوگ ذوق سے عاری ہیں جو یہ کہتے ہیں
کہ اشک ٹوٹتا ہے اور سنائی دیتا نہیں
بدن بھی آگ ہے اور روح بھی جہنم ہے
مرا قصور یہ ہے میں دہائی دیتا نہیں
Pas.E.Aaina
Mujhe Jamal-E-Badan Ka Hai E’Tiraf
magar
main kya karun ki wara-e-badan bhi
dekhta hun
ye kaenat faqat ek rukh nahin
rakhti
chaman bhi dekhta hun aur ban bhi
dekhta hun
meri nazar mein hain jab husn ke
tamam andaz
main fan bhi dekhta hun fikr-o-fan
bhi dekhta hun
nikal gaya hun fareb-e-nigah se
aage
main aasman ko shikan-dar-shikan
bhi dekhta hun
wo aadmi ki sabhi roe jin ki mayyat
par
main us ko zer-e-kafan khanda-
zan bhi dekhta hun
main jaanta hun ki khurshid hai
jalal-maab
magar ghurub se khud ko rihai
deta nahin
main sochta hun ki chand ek jamal-
para hai
magar wo rukh jo kisi ko dikhai
deta nahin
main sochta hun haqiqat ka ye
tazad hai kya
khuda jo deta hai sab kuchh
khudai deta nahin
wo log zauq se aari hain jo ye kahte
hain
ki ashk tutta hai aur sunai deta
nahin
badan bhi aag hai aur ruh bhi
jahannam hai
mera qusur ye hai mein duhai deta
nahin

اپنا تبصرہ بھیجیں