Jis Ka Dar Tha Mujhe Malom Para Logon Se

Jis Ka Dar Tha Mujhe Malom Para Logon Se

Jis Ka Dar Tha Mujhe Malom Para Logon Se
Phir wo khush bakht palat aaya teri zindagi mein

Jis ke Jana peh yeh tou nay mujhe jagah di dil mein
Meri qismat mein hi jab khali jagah likhi thi

Tujhse skhikwa bhi agar karta tou kaise karta
Mein wo sabza tha jisay rond diya jata hai

Mein wo jangal tha jisay kaat diya jata hai
Mein wo dar tha jisay dastak ki kami khati hai

Mein wo manzil tha jisa tooti sarak jati hai
Mein wo ghar tha jisay abad nahi karta koi

Mein to wo tha jisay yad nahi karta koi
Khari es baat ko tou chor bata kaisi hai

Tou nay chaha tha jisay wo tere nazdeek tou hai
Kon se gham nay tujhe chat lia andar se

Aaj kal phir se chup rehti ho sab theek tou hai
Jis ka dar tha mujhe malom para logon se
نظم
جس کا ڈر تھا مجھے معلوم پڑا لوگوں سے
پھر وہ خوش بخت پلٹ آیا تیری زندگی میں

جس کے جانے پہ یہ تو نے مجھے جگہ دی دل میں
میری قسمت میں ہی جب خالی جگہ لکھی تھی

تجھ سے شکوہ بھی اگر کرتا تو کیسے کرتا
میں وہ سبز تھا جسے روند دیا جاتا ہے

میں وہ جنگل تھا جسے کاٹ دیا جاتا ہے
میں وہ در تھا جسے دستک کی کمی کھاتی ہے

میں وہ منزل تھا جہاں ٹوٹی سڑک جاتی ہے
میں وہ گھر تھا جسے آباد نہیں کرتا کوئی

میں تو  وہ تھا کہ جسے یاد نہیں کرتا کوئی
خیر اس بات کو تو چھوڑ بتا کیسی ہے

تو نے چاہا تھا جسے وہ تیرے نزدیک تو ہے
کونسے غم نے تجھے چاٹ لیا اندر سے
آج کل پھر سے چپ رہتی ہو سب ٹھیک تو ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں