Musafat Kabhi Manzil Ka Taiyun Nahi Karti

Musafat Kabhi Manzil Ka Taiyun Nahi Karti

Musafat Kabhi Manzil Ka Taiyun Nahi Karti
Iss rah mein bas pawon ke chhale nahi jate

Un tishna labon ko hai mere khoon se nisbat
Pathar jo mere simt uchale nahi jate

Iss waste us shakhs se kehna tha keh na ja
Koi chorr keh jaye tou hawale nahi jate

Dil se mujhe raghbat thi mere dost wagarna
Toote howay sheeshay tou sambhale nahi jate

Rehte hain meri aankh mein kuch khwab mujassam
Bot hain keh jo kaabe se nikale nahi jate

Musafat kabhi manzil ka taiyun nahi karti
Iss rah mein bas pawon ke chhale nahi jate
غزل
مسافت کبھی منزل کا تعین نہیں کرتی
اس راہ میں بس پاؤں کے چھالے نہیں جاتے

ان تشنہ لبوں کو ہے میرے خون سے نسبت
پتھر جو میری سمت اچھالے نہیں جاتے

اس واسطے اس شخص سے کہنا تھا کہ نہ جا
کوئی چھوڑ کہ جائے تو حوالے نہیں جاتے

دل سے مجھے رغبت تھی میرے دوست وگرنہ
ٹوٹے ہوئے شیشے تو سنبھالے نہیں جاتے

رہتے ہیں مری آنکھ میں کچھ خواب مجسم
بت ہیں کہ جو کعبے سے نکالے نہیں جاتے

مسافت کبھی منزل کا تعین نہیں کرتی
اس راہ میں بس پاؤں کے چھالے نہیں جاتے

اپنا تبصرہ بھیجیں