Meri Bhanwon Ke Aain Darmiyan Ban Gaya

Meri Bhanwon Ke Aain Darmiyan Ban Gaya

Meri Bhanwon Ke Aain Darmiyan Ban Gaya
Jaben peh intezaar ka nishan ban gaya

Suna howa tha hijr mustaqil tanao hai
Wohi howa mera badan Kamaan ban gaya

Moheeb chup mein aahton ka wahma howa
Mein sar se paon tak tamam kaan ban gaya

Hawa se roshni se rabta nahi raha
Jidhar theen khirkiyan idhar makan ban gaya

Shuru din se ghar mein sunn raha tha iss liye
Sukoot meri madri zuban ban gaya

Aur aik din khainchi hoi lakeer mit gai
Guman yaqeen bana yaqeen gumaan ban gaya

Kai khafeef gham mile malaal ban gaye
Zara zara si katarnon se thaan ban gaya

Mere baron ne adatan chuna tha aik dasht
Woh bas gaya Rahim yar khan ban gaya

Suna howa tha hijr mustaqil tanao hai
Wohi howa mera badan Kamaan ban gaya

Meri bhanwon ke aain darmiyan ban gaya
Jaben peh intezaar ka nishan ban gaya
غزل
مری بھنووں کے عین درمیان بن گیا
جبیں پہ انتظار کا نشان بن گیا

سنا ہوا تھا ہجر مستقل تناؤ ہے
وہی ہوا مرا بدن کمان بن گیا

مہیب چپ میں آہٹوں کا واہمہ ہوا
میں سر سے پاؤں تک تمام کان بن گیا

ہوا سے روشنی سے رابطہ نہیں رہا
جدھر تھیں کھڑکیاں اِدھر مکان بن گیا

شروع دن سے گھر میں سن رہا تھا اِس لئے
سکوت میری مادری زبان بن گیا

اور ایک دن کھنچی ہوئی لکیر مٹ گئی
گمان یقین بنا یقیں گماں بن گیا

کئی خفیف غم ملے ملال بن گئے
ذرا ذرا سی کترنوں سے تھان بن گیا

مرے بڑوں نے عادتاً چنا تھا ایک دشت
وہ بس گیا رحیم یار خان بن گیا

مری بھنووں کے عین درمیان بن گیا
جبیں پہ انتظار کا نشان بن گیا
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں