Rukne Ka Samay Guzar Gaya Hai

غزل
رکنے کا سمے گزر گیا ہے
جانا ترا اب ٹھہر گیا ہے
 
رخصت کی گھڑی کھڑی ہے سر پر
دل کوئی دو نیم کر گیا ہے
 
ماتم کی فضا ہے شہر دل میں
مجھ میں کوئی شخص مر گیا ہے
 
بجھنے کو ہے پھر سے چشم نرگس
پھر خواب صبا بکھر گیا ہے
 
بس ایک نگاہ کی تھی اس نے
سارا چہرہ نکھر گیا ہے
Ghazal
Rukne Ka Samay Guzar Gaya Hai
Jaana tera ab thahar gaya hai

Rukhsat ki ghadi khadi hai sar par
Dil koi do-nim kar gaya hai

Matam ki faza hai shahr-e-dil mein
Mujh mein koi shakhs mar gaya hai

Bujhne ko hai phir se chashm-e-nargis
Phir khwab-e-saba bikhar gaya hai

Bas ek nigah ki thi us ne
Sara chehra nikhar gaya hai

اپنا تبصرہ بھیجیں