Main jab wajud ky hairat kady se mil raha tha

میں جب وجود کے حیرت کدے سے مل رہا تھا
مجھے لگا میں کسی معجزے سے مل رہا تھا
میں جاگتا تھا کہ جب لوگ سو چکے تھے تمام
چراغ مجھ سے مرے تجربے سے مل رہا تھا
ہوس سے ہوتا ہوا آ گیا میں عشق کی سمت
یہ سلسلہ بھی اسی راستے سے مل رہا تھا
خدا سے پہلی ملاقات ہو رہی تھی مری
میں اپنے آپ کو جب سامنے سے مل رہا تھا
عجیب لے تھی جو تاثیر دے رہی تھی مجھے
عجیب لمس تھا ہر زاویے سے مل رہا تھا
میں اس کے سینۂ شفاف کی ہری لو سے
دہک رہا تھا سو پورے مزے سے مل رہا تھا
ثواب و اطاعت و تقویٰ فضیلت و القاب
پڑے ہوئے تھے کہیں میں نشے سے مل رہا تھا
ترے جمال کا بجھنا تو لازمی تھا کہ تو
بغیر عشق کئے آئنے سے مل رہا تھا
زمین بھی مرے آغوش سرخ میں تھی علیؔ
فلک بھی مجھ سے ہرے ذائقے سے مل رہا تھا
Main jab wajud ky hairat kady se mil raha tha
Mujhy laga main kisi moajzy se mil raha tha

Main jagta tha keh jab log so chuky thy tamam
Charagh mujh se mere tajurby se mil raha tha

Hawas se hota hua aa gaya main ishq ki simat
Yeh Silsila bhi isi rasty se mil raha tha

Khuda se pehli mulaqat ho rhi thi meri
Main apne ap ko jab samne se mil raha tha

Ajeeb lay thi jo taseer de rahi thi mujhy
Ajeeb lams tha har zawiye se mil raha tha

Main o sky seena e shafaf ki harii lo se
Dahik raha tha so poore maze se mil raha tha

Sawab o itat o taqwa fazeelat ul alqab
Padhy huy thy kahi main nashy se mil raha tha

Tere jamal ka bujhna to lazmi tha keh tu
Begher ishq kiye aaine se mil raha tha

Zameen bhi mee aghosh e surkh mein thi Ali
Falak bhi mujh se hary zaiqy se mil raha tha

اپنا تبصرہ بھیجیں