Baghawaton Ke Sabab Taar Taar Ho Rahe Hain

Baghawaton Ke Sabab Taar Taar Ho Rahe Hain

Baghawaton Ke Sabab Taar Taar Ho Rahe Hain
Jo ik giroh thay ab woh bhi char ho rahe hain

Kahan gunah ki lazzat ka poochnay jaon
Tamam log farishtay shumaar ho rahe hain

Phatay purany libadon se jism jhankta tha
So ab ke rabt naye ustwaar ho rahe hain

Jo mere pass hain okta ke dour jane lagay
Jo mujh se dour hain woh be qaraar ho rahe hain

Yeh hijr dukh nahi aab-e-rawan hai so hum log
Chattan jaisay thay aur aabshar ho rahe hain

Woh phaink aaya hai kasay mein chand pal ka wisaal
Ana parast bhi sab zair-e-bar ho rahe hain

Tumhari had-e-basarat mein aa gaye hum log
Khuda ka shukar hai rah ka ghubar ho rahe hain

Baghawaton ke sabab taar taar ho rahe hain
Jo ik giroh thay ab woh bhi char ho rahe hain
غزل
بغاوتوں کے سبب تار تار ہو رہے ہیں
جو اک گروہ تھے اب وہ بھی چار ہو رہے ہیں

کہاں گناہ کی لذت کا پوچھنے جاؤں
تمام لوگ فرشتے شمار ہو رہے ہیں

پھٹے پرانے لبادوں سے جسم جھانکتا تھا
سو اب کے ربط نئے اِستوار ہو رہے ہیں

جو میرے پاس ہیں اُکتا کے دور جانے لگے
جو مجھ سے دور ہیں وہ بے قرار ہو رہے ہیں

یہ ہجر دکھ نہیں آبِ رواں ہے سو ہم لوگ
چٹان جیسے تھے اور آبشار ہو رہے ہیں

وہ پھینک آیا ہے کاسے میں چند پل کا وصال
انا پرست بھی سب زیرِ بار ہو رہے ہیں

تمہاری حدِ بصارت میں آگئے ہم لوگ
خدا کا شکر ہے رہ کا غبار ہو رہے ہیں

بغاوتوں کے سبب تار تار ہو رہے ہیں
جو اک گروہ تھے اب وہ بھی چار ہو رہے ہیں
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں