Ashk Nadan Se Kaho Baad| Khalil Ur Rehman

Ashk Nadan Se Kaho Baad| Khalil Ur Rehman

Ashk Nadan Se Kaho Baad Mein Pachtayenge
Aap gir kar meri aankhon se kidhar jayenge

Apne lafzoon ko takallum se gira kar jana
Apne lehje ki thakawat mein bikhar jayenge

Tum se le jayenge hum cheen ke wade apne
Hum tou qasmon ki sadaqat se bhe dar jayenge

Ik tera ghar tha meri had musafat lekin
Ab yeh socha hai keh hum had se guzar jayenge

Apen afkar jala dalenge kaghaz kaghaz
Soch mar jayegi tou hum aap bhi mar jayenge

Iss se pehle keh judayi ki khabar tum se mile
Hum ne socha hai keh hum tum se bichar jayenge

Ashk nadan se kaho baad mein pachtayenge
Aap gir kar meri aankhon se kidhar jayenge
غزل
اشک ناداں سے کہو بعد میں پچھتائیں گے
آپ گر کر میری آنکھوں سے کدھر جائیں گے

اپنے لفظوں کو تکلم سے گرا کر جانا
اپنے لہجے کی تھکاوٹ میں بکھر جائیں گے

تم سے لے جائیں گے ہم چھین کے وعدے اپنے
ہم تو قسموں کی صداقت سے بھی ڈر جائیں گے

اک تیرا گھر تھا میری حد مسافت لیکن
اب یہ سوچا ہے کہ ہم حد سے گزر جائیں گے

اپنے افکار جلا ڈالیں گے کاغذ کاغذ
سوچ مر جائے گی تو ہم آُپ بھی مر جائیں گے

اس سے پہلے کہ جدائی کی خبر تم سے ملے
ہم نے سوچا ہے کہ ہم تم سے بچھڑ جائیں گے

اشک ناداں سے کہو بعد میں پچھتائیں گے
آپ گر کر میری آنکھوں سے کدھر جائیں گے

اپنا تبصرہ بھیجیں