Na Jane Sehr Yeh Kia Tou Ne Chashm

Na Jane Sehr Yeh Kia Tou Ne Chashm

Na Jane Sehr Yeh Kia Tou Ne Chashm-E-Yar Kiya
Keh mein ne hosh ke jaame ko tar tar kiya

Fusun ajib yeh aye mausam-e-bahar kiya
Keh ḳhar zar ko hum rang lala zaar kiya

raha hai har ek gul ka jama-e-rangin
Saba ne baagh mein kya zikr-e-zulf-e-yar kiya

Na pucho pichle pahar apni yaad ka aalam
Tumhara zikr sitaron se baar baar kiya

Nasim-e-subha ne aa kar wo ragani charri
Har ek phool ne kantay ko jhuk ke pyar kiya

Mere jahan-e-mohabbat mein par gai halchal
Sukoon-e-dil ne mujhe aur be qarar kiya

Bhar aye dida-e-anjum mein ashk-e-majboori
Jigar ko thaam ke jab hum ne zikr-e-yar kiya

Tarap ke abla pa ek baar phir utthay
Yeh kisi ne tazkira-e-amad-e-bahar kiya

Guzar chuki hain jo ehsan un ki mehfil mein
Unhin qarar ke gharriyon ne be qarar kiya

Na jane sehr yeh kia tou ne chashm-e-yar kiya
keh mein ne hosh ke jaame ko tar tar kiya
غزل
نہ جانے سحر یہ کیا تو نے چشم یار کیا
کہ میں نے ہوش کے جامے کو تار تار کیا

فسوں عجیب یہ اے موسم بہار کیا
کہ خار زار کو ہم رنگ لالہ زار کیا

مہک رہا ہے ہر اک گل کا جامۂ رنگیں
صبا نے باغ میں کیا ذکر زلف یار کیا

نہ پوچھو پچھلے پہر اپنی یاد کا عالم
تمہارا ذکر ستاروں سے بار بار کیا

نسیم صبح نے آ کر وہ راگنی چھیڑی
ہر ایک پھول نے کانٹے کو جھک کے پیار کیا

مرے جہان‌ محبت میں پڑ گئی ہلچل
سکون دل نے مجھے اور بے قرار کیا

بھر آئے دیدۂ انجم میں اشک مجبوری
جگر کو تھام کے جب ہم نے ذکر یار کیا

تڑپ کے آبلہ پا ایک بار پھر اٹھے
یہ کسی نے تذکرۂ آمد بہار کیا

گزر چکی ہیں جو احسانؔ ان کی محفل میں
انہیں قرار کی گھڑیوں نے بیقرار کیا

نہ جانے سحر یہ کیا تو نے چشم یار کیا
کہ میں نے ہوش کے جامے کو تار تار کیا

اپنا تبصرہ بھیجیں