Naheef Lo Ko Bari Dair Tak Uchalay Ga

Naheef Lo Ko Bari Dair Tak Uchalay Ga

Naheef Lo Ko Bari Dair Tak Uchalay Ga
Chiragh taish mein aaya tu maar daalaye ga

Har aik cheez se barh kar azeez rakha hai
Hamaray baad udaasi ko kon palay ga

Nai zaroorten khud hi jaga banati hain
Puranay ishq ko kitna koi sanbhalay ga

Aado ke samnay mohtaat guftagu karna
Woh bad gumaan hai matlab ghalat nikalay ga

Gunwa diya hai sahulat se yun talluq ko
Keh jaisay chand dinon mein naya kamalay ga

Har aik shakhs hi deewar hoga rastay ki
Tou jis kisi se bhi takraya chout khalay ga

Naheef lo ko bari dair tak uchalay ga
Chiragh taish mein aaya tu maar daalaye ga
غزل
نحیف لو کو بڑی دیر تک اُچھالے گا
چراغ طیش میں آیا تو مار ڈالے گا

ہر ایک چیز سے بڑھ کر عزیز رکھا ہے
ہمارے بعد اُداسی کو کون پالے گا

نئی ضرورتیں خود ہی جگہ بناتی ہیں
پرانے عشق کو کتنا کوئی سنبھالے گا

عدو کے سامنے محتاط گفتگو کرنا
وہ بد گمان ہے ، مطلب غلط نکالے گا

گنوا دیا ہے سہولت سے یوں تعلق کو
کہ جیسے چند دنوں میں نیا کمالے گا

ہر ایک شخص ہی دیوار ہوگا رستے کی
تُو جس کسی سے بھی ٹکرایا، چوٹ کھالے گا

نحیف لو کو بڑی دیر تک اُچھالے گا
چراغ طیش میں آیا تو مار ڈالے گا
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں