Kitni Zulfen Udin Kitne Aanchal Ude Chand Ko Kya Khabar

غزل
کتنی زلفیں اڑیں کتنے آنچل اڑے چاند کو کیا خبر
کتنا ماتم ہوا کتنے آنسو بہے چاند کو کیا خبر
 
مدتوں اس کی خواہش سے چلتے رہے ہاتھ آتا نہیں
چاہ میں اس کی پیروں میں ہیں آبلے چاند کو کیا خبر
 
وہ جو نکلا نہیں تو بھٹکتے رہے ہیں مسافر کئی
اور لٹتے رہے ہیں کئی قافلے چاند کو کیا خبر
 
اس کو دعویٰ بہت میٹھے پن کا وصیؔ چاندنی سے کہو
اس کی کرنوں سے کتنے ہی گھر جل گئے چاند کو کیا خبر
 
Ghazal
Kitni Zulfen Udin Kitne Aanchal Ude Chand Ko Kya Khabar
Kitna matam hua kitne aansu bahe chand ko kya khabar
 
Muddaton us ki khwahish se chalte rahe hath aata nahin
Chah mein us ki pairon mein hain aable chand ko kya khabar
 
Wo jo nikla nahin to bhatakte rahe hain musafir kai
Aur luTte rahe hain kai qafile chand ko kya khabar
 
Us ko dawa bahut mithe-pan ka ‘wasi’ chandni se kaho
Us ki kirnon se kitne hi ghar jal gae chand ko kya khabar

اپنا تبصرہ بھیجیں