Mujh Se Pehli Si Mohabbat Mere Mahboob

نظم:مجھ سے پہلی سی محبت
مجھ سے پہلی سی محبت میرے محبوب نہ مانگ
میں نے سمجھا تھا کہ تو ہے تو درخشاں ہے حیات
تیرا غم ہے تو غم دہر کا جھگڑا کیا ہے
تیری صورت سے ہے عالم میں بہاروں کو ثبات
تیری آنکھوں کے سوا دنیا میں رکھا کیا ہے
تو جو مل جائے تو تقدیر نگوں ہو جائے
یوں نہ تھا میں نے فقط چاہا تھا یوں ہو جائے
اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا
راحتیں اور بھی ہیں وصل کی راحت کے سوا
ان گنت صدیوں کے تاریک بہیمانہ طلسم
ریشم و اطلس و کمخاب میں بنوائے ہوئے
جا بہ جا بکتے ہوئے کوچہ و بازار میں جسم
خاک میں لتھڑے ہوئے خون میں نہلائے ہوئے
جسم نکلے ہوئے امراض کے تنوروں سے
پیپ بہتی ہوئی گلتے ہوئے ناسوروں سے
لوٹ جاتی ہے ادھر کو بھی نظر کیا کیجے
اب بھی دل کش ہے ترا حسن مگر کیا کیجے
اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا
راحتیں اور بھی ہیں وصل کی راحت کے سوا
مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ
Nazam:Mujh Sy Pahli Si Muhabbat
Mujh se pahli si mohabbat meri mahbub na mang
main ne samjha tha ki tu hai to darakhshan hai hayat
 
tera gham hai to gham-e-dahr ka jhagda kya hai
teri surat se hai aalam mein bahaaron ko sabaat
 
teri aankhon ke siwa duniya mein rakkha kya hai
tu jo mil jae to taqdir nigun ho jae
 
yun na tha main ne faqat chaha tha yun ho jae
aur bhi dukh hain zamane mein mohabbat ke siwa
 
rahaten aur bhi hain wasl ki rahat ke siwa
an-ginat sadiyon ke tarik bahimana tilism
 
resham o atlas o kamkhab mein bunwae hue
ja-ba-ja bikte hue kucha-o-bazar mein jism
 
khak mein luthde hue khun mein nahlae hue
jism nikle hue amraaz ke tannuron se
 
pip bahti hui galte hue nasuron se
laut jati hai udhar ko bhi nazar kya kije
 
ab bhi dilkash hai tera husn magar kya kije
aur bhi dukh hain zamane mein mohabbat ke siwa
 
rahaten aur bhi hain wasl ki rahat ke siwa
mujh se pahli si mohabbat meri mahbub na mang

اپنا تبصرہ بھیجیں