Kabhi Kabhi Jo Woh Ghurbat Kade | Ehsan Danish

Kabhi Kabhi Jo Woh Ghurbat Kade | Ehsan Danish

Kabhi Kabhi Jo Woh Ghurbat Kade Mein Aaye Hain
Mere bahe howay aanso jabeen peh laye hain

Nah sarguzisht safar pooch mukhtasar yeh hai
Keh apne naqsh qadam hum ne khud mittaye hain

Nazar nah tor saki aansowon ki chalman ko
Us ek shama se utray hain bam-e-dar ke libaas

Is aik lo ne bare phool ban jalaye hain
Yeh dophehar yeh zameen par lapa howa sooraj

Kahin darakht nah deewar-o-dar ke saye hain
Kali kali mein hai dharti ke doodh ki khushbu

Tamam phool usi aik maan ke jaye hain
Nazar khalawon pi aur intezaar be wada

Ba aai amal bhi woh aankhon mein jhilmilae hain
Fasoon shayar se hum is maa gorezan ko

Khalawon se sar kaghaz utaar laye hain
Risala hath se rakhte nah kyun woh sharma kar

Ghazal pargayi hai tou hum samne bhi aaye hain
Chale hain khair se un ko pukarne Danish
Magar woh youn tou nah aayeinge aur nah aaye hain

Kabhi kabhi jo woh ghurbat kade mein aaye hain
Mere bahe howay aanso jabeen peh laye hain
غزل
کبھی کبھی جو وہ غربت کدے میں آئے ہیں
مرے بہے ہوئے آ نسو جبیں پہ لائے ہیں

نہ سر گزشت سفر پوچھ مختصر یہ ہے
کہ اپنے نقش قدم ہم نے خود مٹائے ہیں

نظر نہ توڑ سکی آنسوؤں کی چلمن کو
وہ روز اگرچہ مرے آئینے کی چلمن کو

اس ایک شمع سے اترے ہیں بام در کےلباس
اس ایک لونے بڑے پھول بن جلائے ہیں

یہ دوپہر یہ زمیں پر لپا ہوا سوراج
کہیں درخت نہ دیوار و در کے سائے ہیں

کلی کلی میں ہے دھرتی کے دودھ کی خوشبو
تمام پھول اسی ایک ماں کے جائے ہیں

نظر خلاؤں پی اور انتظار بے وعدہ
بہ ایں عمل بھی وہ آنکھوں میں جھلملائے ہیں

فسون شعر سے ہم اس مہ گریزاں کو
خلاؤں سے سر کاغذ اتار لائے ہیں

رسالہ ہاتھ سے رکھتے نہ کیوں وہ شرماکر
غزل پڑگی ہے تو ہم سامنے بھی آئے ہیں

چلے ہیں خیر سے ان کو پکارنے دانش
مگر وہ یوں تو نہ آئیں گے اورنہ آئے ہیں

کبھی کبھی جو وہ غربت کدے میں آئے ہیں
مرے بہے ہوئے آنسو جبیں پہ لائے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں