Dekhe Howay Kisi Ko Bohat Din Guzar Gaye

Dekhe Howay Kisi Ko Bohat Din Guzar Gaye

Dekhe Howay Kisi Ko Bohat Din Guzar Gaye
Iss dil ki be basi ko bohat din guzar gaye

Har shab chatoon peh chand utarta tu hai magar
Iss ghar mein chandni ko bohat din guzar gaye

Koi jawaz dhoond gham na shanas ka
Be waja bikali ko bohat din guzar gaye

Ab tak akele pan ka musalsal azaab hai
Duniya se dosti ko bohat din guzar gaye

Teri rafaqatein to muqaddar mein hi nah theen
Ab apni hi kami ko bohat din guzar gaye

Muddat hoyi hai toott ke roya nahi hoon mein
Iss chain ki ghari ko bohat din guzar gaye

Woh jagti haweli bhi weeran ho gai
Iss nafrai hansi ko bohat din guzar gaye

Woh qehqhe bhi waqt ke sahra mein khoo gaye
Galyon ki khamoshi ko bohat din guzar gaye

Muddat hoi keh raat ka woh jagna gaya
Iss rang aashiqui ko bohat din guzar gaye

Jo aitibaar zakhm hunar ne ataa kiya
Danish woh shayari ko bohat din guzar gaye

Dekhe howay kisi ko bohat din guzar gaye
Iss dil ki be basi ko bohat din guzar gaye
غزل
دیکھے ہوئے کسی کو بہت دن گزر گئے
اس دل کی بے بسی کو بہت دن گزر گئے

ہرشب چھتوں پہ چاند اترتا تو ہے مگر
اس گھر میں چاندنی کو بہت دن گزر گئے

کوئی جواز ڈھونڈ غم نا شناس کا
بے وجہ بیکلی کو بہت دن گزر گئے

اب تک اکیلے پن کا مسلسل عذاب ہے
دنیا سے دوستی کو بہت دن گزر گئے

تیری رفاقتیں تو مقدر میں ہی نہ تھیں
اب اپنی ہی کمی کو بہت دن گزر گئے

مدت ہوئی ہے ٹوٹ کے رویا نہیں ہوں میں
اس چین کی گھڑی کو بہت دن گزر گئے

وہ جاگتی حویلی بھی ویران ہوگئی
اس نفرئی ہنسی کو بہت دن گزر گئے

وہ قہقہے بھی وقت کے صحرا میں کھو گئے
گلیوں کی خاموشی کو بہت دن گزر گئے

مدت ہوئی کہ رات کا وہ جاگنا گیا
اس رنج عاشقی کو بہت دن گزر گئے

جو اعتبار زخم ہنر نے عطا کیا
دانش وہ شاعری کو بہت دن گزر گئے

دیکھے ہوئے کسی کو بہت دن گزر گئے
اس دل کی بے بسی کو بہت دن گزر گئے

اپنا تبصرہ بھیجیں