Usi Nidamat Se Iss Ke Kandhe| Ghazal Poetry

Usi Nidamat Se Iss Ke Kandhe| Ghazal Poetry

Usi Nidamat Se Iss Ke Kandhe Jhuke Howay Hain
Keh hum chhari ka sahara le kar khare howay hain

Yahan se jane ki jaldi kis ko hai tum batao
Keh suit kaison mein kapre kis ne rakhay howay hain

Kara tou loon-ga alaqa khali mein lar jhagra kar
Magar jo iss ne dilon peh qabze kiye howay hain

Woh khud parindon ka dana lene giya howa hai
Aur iss ke betay shikar karne gaye howay hain

Tumhare dil mein khuli dukano se lag raha hai
Yeh Ghar yahan per bahut porane banay howay hain

Mein kaise bawar karao ja kar yeh roshni ko
Keh un chiraghon peh mere paise lage howay hain

Tumhari duniya mein kitna mushkil hai bach ke chalna
Qadam qadam par tou aastane bane howay hain

Tum un ko chahon tou chhor sakte ho raste mein
Yeh log waise bhi zindagi se katte howay mein

Usi nidamat se iss ke kandhe jhuke howay hain
Keh hum chhari ka sahara le kar khare howay hain
غزل
اسی ندامت سے اس کے کندھے جھکے ہوئے ہیں
کہ ہم چھڑی کا سہارا لے کر کھڑے ہوئے ہیں

یہاں سے جانے کی جلدی کس کو ہے تم بتاؤ
کہ سوٹ کیسوں میں کپڑے کس نے رکھے ہوئے ہیں

کرا تو لوں گا علاقہ خالی میں لڑ جھگڑا کر
مگر جو اس نے دلوں پہ قبضے کیے ہوئے ہیں

وہ خود پرندوں کا دانہ لینے گیا ہوا ہے
اور اس کے بیٹے شکار کرنے گئے ہوئے ہیں

تمہارے دل میں کھلی دکانوں سے لگ رہا ہے
یہ گھر یہاں پربہت پرانے بنے ہوئے ہیں

میں کیسے باور کراؤں جا کر یہ روشنی کو
کہ ان چراغوں پہ میرے پیسے لگے ہوئے ہیں

تمہاری دنیا میں کتنا مشکل ہے بچ کے چلنا
قدم قدم پر تو آستانے بنے ہوئے ہیں

تم ان کو چاہوں تو چھوڑ سکتے ہو راستے میں
یہ لوگ ویسے بھی زندگی سے کٹے ہوئے میں

اسی ندامت سے اس کے کندھے جھکے ہوئے ہیں
کہ ہم چھڑی کا سہارا لے کر کھڑے ہوئے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں