Aaya Nahi Hai Rah Peh Charkh|Ghzal Ehsan Danish

Aaya Nahi Hai Rah Peh Charkh|Ghzal Ehsan Danish

Aaya Nahi Hai Rah Peh Charkh Kahin Abhi
Khatray mein dekhta hoon chaman ka chaman abhi

Uthenge apni bazam se mansoor senkron
Kaam ahl haq ke aayenge dar-o-rasan abhi

Ranj-o-mahan nigah jo phairen tou phair len
Lekin mujhe azeez hain ranj-o-mahan abhi

Bharne do aur shoq shahadat awam mein
Kuch banjh tou nahi hai yeh khaak watan abhi

Aankhon ki surkhiyan hain azayem ka ishtihar
Seene salag rahe hain lagi hai lagan abhi

Yeh karwaan shanawar taufaan tou hai magar
Chehron peh bolti hai safar thakan abhi

Hain samne hamare riwayat kaar-e-zaar
Bandhe howay hain sar se mujahid kafan abhi

Ban ban ke jane kitne fana hung e somanat
Baste hain har gali mein yahan bot shikan abhi

A shaheryar hum se shikasta dilon mein
Teri taraf se khalq ko hai husan zan abhi

Raqsaan abhi hain sham-e-gharibaan ki jhalkiyan
Roshan nahi hai khandah subah watan abhi

Jeete rahen umeed peh randan tashna-e-kaam
Chalta nahi hai dour sharab kahen abhi

Jin ke lahoo se qasar wafa mein jale chiragh
Un gham zadun mein aam hain rang-o-mahan abhi

Gulshan se phool chal ke mazaroon tak aagaye
Lekin hai baghban ki jabeen pur shekan abhi

Hai ilm ki nigaah se pinhan reh amal
Kehte nahi kafan ko yahan peerhan abhi

Nabaz bahar par hain bagulon ki ungliyan
Chalne ko chal rahi hai naseem chaman abhi

Shabnam ke ashk sokhne dati nahi fiza
Hansta hai khud bahar chaman par chaman abhi

Har gaam har muqaam peh koshish ke bawajood
Danish na aasaka mujhay jeene ka faan abhi

Yeh karwaan shanawar taufaan tou hai magar
Chehron peh bolti hai safar thakan abhi

Aaya nahi hai rah peh Charkh kahin abhi
Khatray mein dekhta hoon chaman ka chaman abhi

Aaya nahi hai rah peh Charkh kahin abhi

غزل
آیا نہیں ہے راہ پہ چرخ کہن ابھی
خطرے میں دیکھتا ہوں چمن کا چمن ابھی

اُٹھیں گے اپنی بزم سے منصور سیکڑوں
کام اہل حق کے آئیں گے دار و رسن ابھی

رنج و محن نگاہ جو پھیریں تو پھیر لیں
لیکن مجھے عزیز ہیں رنج و محن ابھی

بڑھنے دو اور شوق شہادت عوام میں
کچھ بانجھ تو نہیں ہے یہ خاک وطن ابھی

آنکھوں کی سرخیاں ہیں عزائم کا اشتہار
سینے سلگ رہے ہیں لگی ہے لگن ابھی

یہ کارواں شناور طوفاں تو ہے مگر
چہروں پہ بولتی ہے سفر کی تھکن ابھی

ہیں سامنے ہمارے روایات کارِِ زار
باندھے ہوئے ہیں سر سے مجاہد کفن ابھی

بن بن کے جانے کتنے فنا ہو گے سومنات
بستے ہیں ہر گلی میں یہاں بت شکن ابھی

اے شہریار ہم سے شکستہ دلوں میں
تیری طرف سے خلق کو ہے حسن ظن ابھی

رقصاں ابھی ہیں شام غریباں کی جھلکیاں
روشن نہیں ہے خندہ صبح وطن ابھی

جیتے رہیں امید پہ رندان تشنہِ کام
چلتا نہیں ہے دور شراب کہن ابھی

جن کے لہو سے قصر وفا میں جلے چراغ
ان غم زدوں میں عام ہیں رنج و محن ابھی

گلشن سے پھول چل کے مزاروں تک آگئے
لیکن ہے باغباں کی جبیں پر شکن ابھی

ہے علم کی نگاہ سے پنہاں رہ عمل
کہتے نہیں کفن کو یہاں پیرہن ابھی

نبض بہار پر ہیں بگولوں کی انگلیاں
چلنے کو چل رہی ہے نسیم چمن ابھی

شبنم کے اشک سوکھنے دیتی نہیں فضا
ہنستا ہے خود بہار چمن پر چمن ابھی

ہر گام ہر مقام پہ کوشش کے باوجود
دانش نہ آسکا مجھے جینے کا فن ابھی

آیا نہیں ہے راہ پہ چرخ کہن ابھی
خطرے میں دیکھتا ہوں چمن کا چمن ابھی

اپنا تبصرہ بھیجیں