Nisaar Main Teri Galiyon Ke Ai Watan Ki Jahan

Nisaar Main Teri Galiyon Ke Ai Watan Ki Jahan
chali hai rasm ki koi na sar utha ke chale
 
jo koi chahne wala tawaf ko nikle
nazar chura ke chale jism o jaan bacha ke chale
 
hai ahl-e-dil ke liye ab ye nazm-e-bast-o-kushad
ki sang-o-khisht muqayyad hain aur sag aazad
 
bahut hai zulm ke dast-e-bahana-ju ke liye
jo chand ahl-e-junun tere nam-lewa hain
 
bane hain ahl-e-hawas muddai bhi munsif bhi
kise wakil karen kis se munsifi chahen
 
magar guzarne walon ke din guzarte hain
tere firaq mein yun subh o sham karte hain
 
bujha jo rauzan-e-zindan to dil ye samjha hai
ki teri mang sitaron se bhar gai hogi
 
chamak uthe hain salasil to hum ne jaana hai
ki ab sahar tere rukh par bikhar gai hogi
 
gharaz tasawwur-e-sham-o-sahar mein jite hain
giraft-e-saya-e-diwar-o-dar mein jite hain
 
yunhi hamesha ulajhti rahi hai zulm se khalq
na un ki rasm nai hai na apni rit nai
 
yunhi hamesha khilae hain hum ne aag mein phul
na un ki haar nai hai na apni jit nai
 
isi sabab se falak ka gila nahin karte
tere firaq mein hum dil bura nahin karte
 
gar aaj tujh se juda hain to kal baham honge
ye raat bhar ki judai to koi baat nahin
 
gar aaj auj pe hai tala-e-raqib to kya
ye chaar din ki khudai to koi baat nahin
 
jo tujh se ahd-e-wafa ustuwar rakhte hain
ilaj-e-gardish-e-lail-o-nahaar rakhte hain

نظم

نثار میں تری گلیوں کے اے وطن کہ جہاں
چلی ہے رسم کہ کوئی نہ سر اٹھا کے چلے

جو کوئی چاہنے والا طواف کو نکلے
نظر چرا کے چلے جسم و جاں بچا کے چلے

ہے اہل دل کے لیے اب یہ نظم بست و کشاد
کہ سنگ و خشت مقید ہیں اور سگ آزاد

بہت ہے ظلم کے دست بہانہ جو کے لیے
جو چند اہل جنوں تیرے نام لیوا ہیں

بنے ہیں اہل ہوس مدعی بھی منصف بھی
کسے وکیل کریں کس سے منصفی چاہیں

مگر گزارنے والوں کے دن گزرتے ہیں
ترے فراق میں یوں صبح و شام کرتے ہیں

بجھا جو روزن زنداں تو دل یہ سمجھا ہے
کہ تیری مانگ ستاروں سے بھر گئی ہوگی

چمک اٹھے ہیں سلاسل تو ہم نے جانا ہے
کہ اب سحر ترے رخ پر بکھر گئی ہوگی

غرض تصور شام و سحر میں جیتے ہیں
گرفت سایۂ دیوار و در میں جیتے ہیں

یوں ہی ہمیشہ الجھتی رہی ہے ظلم سے خلق
نہ ان کی رسم نئی ہے نہ اپنی ریت نئی

یوں ہی ہمیشہ کھلائے ہیں ہم نے آگ میں پھول
نہ ان کی ہار نئی ہے نہ اپنی جیت نئی

اسی سبب سے فلک کا گلہ نہیں کرتے
ترے فراق میں ہم دل برا نہیں کرتے

گر آج تجھ سے جدا ہیں تو کل بہم ہوں گے
یہ رات بھر کی جدائی تو کوئی بات نہیں

گر آج اوج پہ ہے طالع رقیب تو کیا
یہ چار دن کی خدائی تو کوئی بات نہیں

جو تجھ سے عہد وفا استوار رکھتے ہیں
علاج گردش لیل و نہار رکھتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں