Dubta Saf Nazar Aaya Kinara Koi Dost

غزل
ڈوبتا صاف نظر آیا کنارہ کوئی دوست
پھر بھی کشتی سے نہیں ہم نے اتارا کوئی دوست
 
جب بھی نیکی کا کوئی کام کیا ہے ہم نے
دے دیا رب نے ہمیں آپ سے پیارا کوئی دوست
 
جیت پر خوش ہو تجھے اس سے غرض کیا مرے یار
تیری خوشیوں کے لئے جان سے ہارا کوئی دوست
 
کیسے جی پائیں گے اس شہر پریشاں میں جہاں
کوئی دشمن ہے ہمارا نہ ہمارا کوئی دوست
 
کچھ تو جینے کے لئے ہم کو بھی دے رب کریم
ساغر و مینا کسی غم کا سہارا کوئی دوست
 
روٹھ جائے مری آنکھوں سے بھلے بینائی
کاش روٹھے نہ وصیؔ آنکھ کا تارا کوئی دوست
 
Ghazal
Dubta Saf Nazar Aaya Kinara Koi Dost
Phir bhi kashti se nahin hum ne utara koi dost
 
Jab bhi neki ka koi kaam kiya hai hum ne
De diya rab ne hamein aap se pyara koi dost
 
Jit par khush ho tujhe is se gharaz kya mere yar
Teri khushiyon ke liye jaan se haara koi dost
 
Kaise ji paenge is shahr-e-pareshan mein jahan
Koi dushman hai hamara na hamara koi dost
 
Kuchh to jine ke liye hum ko bhi de rabb-e-karim
Saghar-o-mina kisi gham ka sahaara koi dost
 
Ruth jae meri aankhon se bhale binai
Kash ruthe na ‘wasi’ aankh ka tara koi dost

اپنا تبصرہ بھیجیں