Beqarari Si  Hai Beqarari Hai

بے قراری سی بے قراری ہے
وصل ہے اور فراق طاری ہے

جو گزاری نہ جا سکی ہم سے
ہم نے وہ زندگی گزاری ہے

نگھرے کیا ہوئے کہ لوگوں پر
اپنا سایہ بھی اب تو بھاری ہے

بن تمہارے کبھی نہیں آئی
کیا مری نیند بھی تمہاری ہے

آپ میں کیسے آؤں میں تجھ بن
سانس جو چل رہی ہے آری ہے

اس سے کہیو کہ دل کی گلیوں میں
رات دن تیری انتظاری ہے

ہجر ہو یا وصال ہو کچھ ہو
ہم ہیں اور اس کی یادگاری ہے

اک مہک سمت دل سے آئی تھی
میں یہ سمجھا تری سواری ہے

حادثوں کا حساب ہے اپنا
ورنہ ہر آن سب کی باری ہے

خوش رہے تو کہ زندگی اپنی
عمر بھر کی امیدواری ہے

beqarari si hai beqarari hai
wasl hai aur firaq tari hai
 
jo guzari na ja saki hum se
hum ne wo zindagi guzari hai
 
nighare kya hue ki logon par
apna saya bhi ab to bhaari hai
 
bin tumhaare kabhi nahin aai
kya meri nind bhi tumhaari hai
 
aap mein kaise aaun main tujh bin
sans jo chal rahi hai aari hai
 
us se kahiyo ki dil ki galiyon mein
raat din teri intizari hai
 
hijr ho ya visal ho kuchh ho
hum hain aur us ki yaadgari hai
 
ek mahak samt-e-dil se aai thi
main ye samjha teri sawari hai
 
hadson ka hisab hai apna
warna har aan sab ki bari hai
 
khush rahe tu ki zindagi apni
umr bhar ki umid-wari hai

اپنا تبصرہ بھیجیں