Yeh Kon Raah Mein Baithe Hain Muskarate

Yeh Kon Raah Mein Baithe Hain Muskarate

Yeh Kon Raah Mein Baithe Hain Muskarate Hain
Musafaron ko ghalat rasta batate hain

Tere lagaye howay zakham kyu nahi bhartay
Mere lagaye howay pear sookh jate hain

Inhein gilla tha keh mein ne inhein nahi chaha
Yeh ab jo meri tawajja se khauf khate hain

Koi tumhara safar par gaya tu puchengay
Keh rail guzaray tu ham hath kyun hilate hain

Jo baat apne liye doston ke mouh se sunni
Dubara bolon tu hoton pe zakham aate hain

Yeh kon raah mein baithe hain muskarate hain
Musafaron ko ghalat rasta batate hain
غزل
یہ کون راہ میں بیٹھے ہیں مُسکراتے ہیں
مسافروں کو غلط راستہ بتاتے ہیں

ترے لگائے ہوئے زخم کیوں نہیں بھرتے
مرے لگائے ہوئے پیڑ سوکھ جاتے ہیں

اِنہیں گلہ تھا کہ میں نے اِنہیں نہیں چاہا
یہ اب جو میری توجہ سے خوف کھاتے ہیں

کوئی تمہارا سفر پر گیا تو پوچھیں گے
کہ ریل گزرے تو ہم ہاتھ کیوں ہلاتے ہیں

جو بات اپنے لیے دوستوں کے منہ سے سُنی
دوبارہ بولوں تو ہونٹوں پہ زخم آتے ہیں

یہ کون راہ میں بیٹھے ہیں مُسکراتے ہیں
مسافروں کو غلط راستہ بتاتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں