To Behtar Hai Yahi

نظم:تو بہتر ہےیہی 
یہ تری آنکھوں کی بے زاری یہ لہجے کی تھکن
کتنے اندیشوں کی حامل ہیں یہ دل کی دھڑکنیں
پیشتر اس کے کہ ہم پھر سے مخالف سمت کو
بے خدا حافظ کہے چل دیں جھکا کر گردنیں
آؤ اس دکھ کو پکاریں جس کی شدت نے ہمیں
اس قدر اک دوسرے کے غم سے وابستہ کیا
وہ جو تنہائی کا دکھ تھا تلخ محرومی کا دکھ
جس نے ہم کو درد کے رشتے میں پیوستہ کیا
وہ جو اس غم سے زیادہ جاں گسل قاتل رہا
وہ جو اک سیل بلا انگیز تھا اپنے لیے
جس کے پل پل میں تھے صدیوں کے سمندر موجزن
چیختی یادیں لیے اجڑے ہوئے سپنے لیے
میں بھی ناکام وفا تھا تو بھی محروم مراد
ہم یہ سمجھے تھے کہ درد مشترک راس آ گیا
تیری کھوئی مسکراہٹ قہقہوں میں ڈھل گئی
میرا گم گشتہ سکوں پھر سے مرے پاس آ گیا
تپتی دوپہروں میں آسودہ ہوئے بازو مرے
تیری زلفیں اس طرح بکھریں گھٹائیں ہو گئیں
تیرا برفیلا بدن بے ساختہ لو دے اٹھا
میری سانسیں شام کی بھیگی ہوائیں ہو گئیں
زندگی کی ساعتیں روشن تھیں شمعوں کی طرح
جس طرح سے شام گزرے جگنوؤں کے شہر میں
جس طرح مہتاب کی وادی میں دو سائے رواں
جس طرح گھنگھرو چھنک اٹھیں نشے کی لہر میں
آؤ یہ سوچیں بھی قاتل ہیں تو بہتر ہے یہی
پھر سے ہم اپنے پرانے زہر کو امرت کہیں
تو اگر چاہے تو ہم اک دوسرے کو چھوڑ کر
اپنے اپنے بے وفاؤں کے لیے روتے رہیں
Nazam:To Behtar Yehi Hai
Ye Teri Aankhon Ki Be-Zari Ye Lahje Ki Thakan
kitne andeshon ki hamil hain ye dil ki dhadkanen
 
pesh-tar is ke ki hum phir se mukhalif samt ko
be-khuda-hafiz kahe chal den jhuka kar gardanen
 
aao us dukh ko pukaren jis ki shiddat ne hamein
is qadar ek dusre ke gham se wabasta kiya
 
wo jo tanhai ka dukh tha talkh mahrumi ka dukh
jis ne hum ko dard ke rishte mein paiwasta kiya
 
wo jo is gham se ziyaada jaan-gusil qatil raha
wo jo ek sail-e-bala-angez tha apne liye
 
jis ke pal pal mein the sadiyon ke samundar maujzan
chikhti yaaden liye ujde hue sapne liye
 
main bhi nakaam-e-wafa tha to bhi mahrum-e-murad
hum ye samjhe the ki dard-e-mushtarak ras aa gaya
 
teri khoi muskurahat qahqahon mein dhal gai
mera gum-gashta sukun phir se mere pas aa gaya
 
tapti do-pahron mein aasuda hue bazu mere
teri zulfen is tarah bikhrin ghataen ho gain
 
tera barfila badan be-sakhta lau de utha
meri sansen sham ki bhigi hawaen ho gain
 
zindagi ki saaten raushan thin shamon ki tarah
jis tarah se sham guzre jugnuon ke shahr mein
 
jis tarah mahtab ki wadi mein do sae rawan
jis tarah ghunghru chhanak utthen nashe ki lahr mein
 
aao ye sochen bhi qatil hain to behtar hai yahi
phir se hum apne purane zahr ko amrit kahen
 
tu agar chahe to hum ek dusre ko chhod kar
apne apne be-wafaon ke liye rote rahen

اپنا تبصرہ بھیجیں