Khawabon Ko Aankh Se Mina Kerti Hai

Khawabon Ko Aankh Se Mina Kerti Hai

Ghazal
Khawabon Ko Aankhon Se Mina Karti Hai
Neend hamesha dhokha karti hai

Awazon ka hafs agar barh jata hai
Khamoshi mujh mein darwaza gadti hai

Us ladki se bas itna rishta hai
Mil jaye tou baat wagera karti hai

Barish meray rab ki aisi nemat hai
Ronay main asani paida kerti hai

Such pocho tou hafi yeh tanhai bhi
Jinay ka saaman mohaiya karti hai

Khawabon ko aankhon se mina kerti hai
Neend hamesha dhokha karti hai
غزل
خوابوں کو آنکھوں سے مینا کرتی ہے
نیند ہمیشہ مجھ سے دھوکہ کرتی ہے

آوازوں کا حفس اگر بڑھ جاتا ہے
خاموشی مجھ میں دروازہ گڑتی ہے

اُس لڑکی سے بس اب اتنا رشتہ ہے
مل جائے تو بات وغیرہ کرتی ہے

بارش میرے رب کی ایسی نعمت ہے
رونے میں آسانی پیدا کرتی ہے

سچ پوچھو توحافی یہ تنہائی بھی
جینے کا سامان مہیا کرتی ہے

خوابوں کو آنکھوں سے مینا کرتی ہے
نیند ہمیشہ مجھ سے دھوکہ کرتی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں