Ek Arzu

نظم:ایک آرزو
دنیا کی محفلوں سے اکتا گیا ہوں یا رب
کیا لطف انجمن کا جب دل ہی بجھ گیا ہو
شورش سے بھاگتا ہوں دل ڈھونڈتا ہے میرا
ایسا سکوت جس پر تقریر بھی فدا ہو
مرتا ہوں خامشی پر یہ آرزو ہے میری
دامن میں کوہ کے اک چھوٹا سا جھونپڑا ہو
آزاد فکر سے ہوں عزلت میں دن گزاروں
دنیا کے غم کا دل سے کانٹا نکل گیا ہو
لذت سرود کی ہو چڑیوں کے چہچہوں میں
چشمے کی شورشوں میں باجا سا بج رہا ہو
گل کی کلی چٹک کر پیغام دے کسی کا
ساغر ذرا سا گویا مجھ کو جہاں نما ہو
ہو ہاتھ کا سرہانا سبزے کا ہو بچھونا
شرمائے جس سے جلوت خلوت میں وہ ادا ہو
مانوس اس قدر ہو صورت سے میری بلبل
ننھے سے دل میں اس کے کھٹکا نہ کچھ مرا ہو
صف باندھے دونوں جانب بوٹے ہرے ہرے ہوں
ندی کا صاف پانی تصویر لے رہا ہو
ہو دل فریب ایسا کوہسار کا نظارہ
پانی بھی موج بن کر اٹھ اٹھ کے دیکھتا ہو
آغوش میں زمیں کی سویا ہوا ہو سبزہ
پھر پھر کے جھاڑیوں میں پانی چمک رہا ہو
پانی کو چھو رہی ہو جھک جھک کے گل کی ٹہنی
جیسے حسین کوئی آئینہ دیکھتا ہو
مہندی لگائے سورج جب شام کی دلہن کو
سرخی لیے سنہری ہر پھول کی قبا ہو
راتوں کو چلنے والے رہ جائیں تھک کے جس دم
امید ان کی میرا ٹوٹا ہوا دیا ہو
بجلی چمک کے ان کو کٹیا مری دکھا دے
جب آسماں پہ ہر سو بادل گھرا ہوا ہو
پچھلے پہر کی کوئل وہ صبح کی موذن
میں اس کا ہم نوا ہوں وہ میری ہم نوا ہو
کانوں پہ ہو نہ میرے دیر و حرم کا احساں
روزن ہی جھونپڑی کا مجھ کو سحر نما ہو
پھولوں کو آئے جس دم شبنم وضو کرانے
رونا مرا وضو ہو نالہ مری دعا ہو
اس خامشی میں جائیں اتنے بلند نالے
تاروں کے قافلے کو میری صدا درا ہو
ہر دردمند دل کو رونا مرا رلا دے
بے ہوش جو پڑے ہیں شاید انہیں جگا دے

Nazam:Ek Arzu

Duniya Ki Mahfilon Se Ukta Gaya Hun Ya Rab
kya lutf anjuman ka jab dil hi bujh gaya ho
 
shorish se bhagta hun dil dhundta hai mera
aisa sukut jis par taqrir bhi fida ho
 
marta hun khamushi par ye aarzu hai meri
daman mein koh ke ek chhota sa jhonpada ho
 
aazad fikr se hun uzlat mein din guzarun
duniya ke gham ka dil se kanta nikal gaya ho
 
lazzat sarod ki ho chidiyon ke chahchahon mein
chashme ki shorishon mein baja sa baj raha ho
 
gul ki kali chatak kar paigham de kisi ka
saghar zara sa goya mujh ko jahan-numa ho
 
ho hath ka sirhana sabze ka ho bichhauna
sharmae jis se jalwat khalwat mein wo ada ho
 
manus is qadar ho surat se meri bulbul
nanhe se dil mein us ke khatka na kuchh mera ho
 
saf bandhe donon jaanib bute hare hare hon
naddi ka saf pani taswir le raha ho
 
ho dil-fareb aisa kohsar ka nazara
pani bhi mauj ban kar uth uth ke dekhta ho
 
aaghosh mein zamin ki soya hua ho sabza
phir phir ke jhadiyon mein pani chamak raha ho
 
pani ko chhu rahi ho jhuk jhuk ke gul ki tahni
jaise hasin koi aaina dekhta ho
 
mehndi lagae suraj jab sham ki dulhan ko
surkhi liye sunahri har phul ki qaba ho
 
raaton ko chalne wale rah jaen thak ke jis dam
ummid un ki mera tuta hua diya ho
 
bijli chamak ke un ko kutiya meri dikha de
jab aasman pe har su baadal ghira hua ho
 
pichhle pahr ki koyal wo subh ki moazzin
main us ka ham-nawa hun wo meri ham-nawa ho
 
kanon pe ho na mere dair o haram ka ehsan
rauzan hi jhonpadi ka mujh ko sahar-numa ho
 
phulon ko aae jis dam shabnam wazu karane
rona mera wazu ho nala meri dua ho
 
is khamushi mein jaen itne buland nale
taron ke qafile ko meri sada dira ho
 
har dardmand dil ko rona mera rula de
behosh jo pade hain shayad unhen jaga de

اپنا تبصرہ بھیجیں