Tum Sarwat Ko Parhti Ho

نظم:لڑکی
تم ثروت کو پڑھتی ہو
کتنی اچھی لڑکی ہو
بات نہیں سنتی ہو کیوں
غزلیں بھی تو سنتی ہو
کیا رشتہ ہے شاموں سے
سورج کی کیا لگتی ہو
لوگ نہیں ڈرتے رب سے
تم لوگوں سے ڈرتی ہو
میں تو جیتا ہوں تم میں
تم کیوں مجھ پہ مرتی ہو
آدم اور سدھر جائے
تم بھی حد ہی کرتی ہو
کس نے جینس کری ممنوع
پہنو اچھی لگتی ہو
Nazam:Ladki
Tum Sarwat Ko Parhti Ho
kitni achchhi ladki ho
 
baat nahin sunti ho kyun
ghazlen bhi to sunti ho
 
kya rishta hai shamon se
suraj ki kya lagti ho
 
log nahin darte rab se
tum logon se darti ho
 
main to jita hun tum mein
tum kyun mujh pe marti ho
 
aadam aur sudhar jae
tum bhi had hi karti ho
 
kis ne jeans kari mamnua
pahno achchhi lagti ho
 

اپنا تبصرہ بھیجیں