Kon Kehta Taleem-E-Rafu Deta Hai

Kon Kehta Taleem-E-Rafu Deta Hai

Ghazal
Kon Kehta Hai Taleem-E-Rafu Deta Hai
Ishq tou chaar gire-bani ki khoo deta hai

Jitne izzat tere ahbab tujhe dete hain
Us se barh kar tou mujhe mera adoo deta hai

Yaar ki mooj hai us shaakh ko wo azn-e-sukhan
Nahi deta hai qabho aur qabho deta hai

Ham jo aik yaad ki lazat se shikam bhartay hain
Tu samjhta hai ke yeh rizq bhi tu deta hai

Burd-e-daryaa hun mujhe paaki aur na-paaki kia
Aur tu hai keh mujhe hukm-e-wazo deta hai

Dekh adab-e-shahadat keh tera deewana
Khidmat-e-taig main khud barh ke galoo deta hai

Ta ke masti main Ali farq na reh jaye so
Apne hosyar ko bhar bhar ke soboo deta hai

Kon kehta hai taleem-e-rafu deta hai
Ishq tou chaar gire-bani ki khoo deta hai
غزل
کون کہتا ہے تعلیمِ رفوں دیتا ہے
عشق تو چار گریبانی کی خوہ دیتا ہے

جتنی عزت تیرے احباب تجھے دیتے ہیں
اُس سے بڑٓھ کر تو مجھے میرا عدو دیتا ہے

یار کی موج ہے اُس شاخ کو وہ ازنِ سخن
نہیں دیتا ہے کبھو اور کبھو دیتا ہے

ہم جو ایک یاد کی لزت سے شکم بھرتے ہیں
تو سمجھتا ہےکہ یہ رزق بھی تو دیتا ہے

بردِ دریا ہوں مجھے پاکی و نا پاکی کیا
اور تو ہے کہ مجھے حکمِ وضو دیتا ہے

دیکھ آدابِ شہادت کہ تیرا دیوآنہ
خدمتِ تیگ میں خود بڑھ کے گلو دیتا ہے

تاکہ مستی میں علیؔ فرق نہ رہے جائے سو
اپنے ہوشیار کو بھر بھر کے صبو دیتا ہے

کون کہتا ہے تعلیمِ رفوں دیتا ہے
عشق تو چار گریبانی کی خوہ دیتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں