Ishq Ko Taqleed Se Azad Kar

Ishq Ko Taqleed Se Azad Kar

Ishq Ko Taqleed Se Azad Kar
Dil se garyah ankah se faryad kar

Baz aa aye bandah hussan majaz
Yuon na apni zindagi barbar kar

Aye khayalon ke makeen nazroon se dor
Meri weraan khalwatain abad kar

Nazaa mein hichken nahi aai mujhe
Bholne wale khudara yaad kar

Hussan ko duniya ki ankhon se na dekh
Apni ek taraz nazar ejaad kar

Ishart dunya hai ek khawab bahar
Kabaah-e-dil dard se abad kar

Ab kahan ehsan duniya mein wafa
Tuba kar nadan khuda ko yad kar

Ishq ko taqleed se azad kar
Dil se garyah ankah se faryad kar
غزل
عشق کو تقلید سے آزاد کر
دل سے گریہ آنکھ سے فریاد کر

باز آ اے بندۂ حسن مجاز
یوں نہ اپنی زندگی برباد کر

اے خیالوں کے مکیں نظروں سے دور
میری ویراں خلوتیں آباد کر

نزع میں ہچکی نہیں آئی مجھے
بھولنے والے خدارا یاد کر

حسن کو دنیا کی آنکھوں سے نہ دیکھ
اپنی اک طرز نظر ایجاد کر

عشرت دنیا ہے اک خواب بہار
کعبۂ دل درد سے آباد کر

اب کہاں احسان دنیا میں وفا
توبہ کر ناداں خدا کو یاد کر

عشق کو تقلید سے آزاد کر
دل سے گریہ آنکھ سے فریاد کر

اپنا تبصرہ بھیجیں