Puranay Shahr Ki Veraan Gali Mein| Poems Poetry

Puranay Shahr Ki Veraan Gali Mein| Poems Poetry

Puranay Shahr Ki Veraan Gali Mein
Jab bhi aadhi raat hoti hai

To kutta bhonkta hai
Kutta bhonkta hai
Aik saya sa ubharta hai
Mere kamre ke veraan taaq par rakhe
Diye ki lo larazti hai
Sarrak ke ik sire se ajnabi se chaap ubharti hai
Uddasi ghar ke darwaze par aakar
Bain karti hai
Aur kutta bhonkhta hai
Kutta bhonkta hai
Neem shaab ko dushamano ki fauj ki yalghaar se
Shehzadiyan sab
Sar barhna bhagti hain
Aur raja qatal hota hai
Faisal shahr yeh sar kat kar latkaye jate hain
Naya farman jari hota hai
Aur itaat ke liye sab log jhokte hain
Zameen par
Aasman se ik sitara toot girta hai
Hawa faryaad karti hai
Darakhton mein ajab sargooshiyan si hone lagti hain
Mere kamre ke weraan taaq par rakhe
Diye ki lo larzti hai
Aur ajdaha nikal kar fakhta ki naram garden se
Liptta hai
Rawayat se hamre shahr ki
Jab bhi mosibat aati hai
To neem shab ko azanein goonjti hain
Log janen shahr peh koi qayamat aayi hai
Iss shab
Ghanim shahr ke aagay
Itaat ke liye sab log jhokte hain
Azaan koi nahi deta
Puranay shahr ki Veraan gali mein
Aik kutta bhonkta hai
نظم
پرانے شہر کی ویراں گلی میں
جب بھی آدھی رات ہوتی ہے
تو کتا بھونکتا ہے
کتا بھونکتا ہے
ایک سایا سا اُبھرتا ہے
مرے کمرے کے ویراں طاق پر رکھے
دیے کی لو لرزتی ہے
سڑک کے اک سرے سے اجنبی سے چاپ اُبھرتی ہے
اُداسی گھر کے دروازے پر آکر
بین کرتی ہے
اور کتا بھونکتا ہے
کتا بھونکتا ہے
نیم شپ کو دشمنوں کی فوج کی یلغار سے
شہزادیاں سب
سر برہنہ بھاگتی ہیں
اور راجہ قتل ہوتا ہے
فیصل شہر یہ سرکاٹ کر لٹکائے جاتے ہیں
نیا فرمان جاری ہوتا ہے
اور اطاعت کےلئے سب لوگ جھکتے ہیں
زمین پر
آسماں سے اک ستارہ ٹوٹ گرتا ہے
ہوا فریاد کرتی ہے
درختوں میں عجب سرگوشیاں سی ہونے لگتی ہیں
مرے کمرے کے ویراں طاق پر رکھے
دیے کی لو لرزتی ہے
اور اژدہ نکل کر فاختہ کی نرم گردن سے
لپٹتا ہے
روایت سے ہمارے شہر کی
جب بھی مصیبت آتی ہے
تو نیم شب کو اذانیں گونجتی ہیں
لوگ جانیں شہر پہ کوئی قیامت آئی ہے
اس شب
غنیم شہر کے آگے
اطاعت کے لئے سب لوگ جھکتے ہیں
اذاں کوئی نہیں دیتا
پرانے شہرکی ویراں گلی میں
ایک کتا بھونکتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں