Hum Se Ulfat Jatai Jati Hai

Hum Se Ulfat Jatai Jati Hai

غزل
ہم سے الفت جتائی جاتی ہے
بے قراری بڑھائی جاتی ہے

دیکھ کر ان کے لب پہ خندۂ نور
نیند سی غم کو آئی جاتی ہے

غم الفت کے کارخانے میں
زندگی جگمگائی جاتی ہے

ان کی چشم کرم پہ ناز نہ کر
یوں بھی ہستی مٹائی جاتی ہے

بزم میں دیکھ رنگ آمد دوست
روشنی تھرتھرائی جاتی ہے

دیکھ اے دل وہ اٹھ رہی ہے نقاب
اب نظر آزمائی جاتی ہے

ان کے جاتے ہی کیا ہوا دل کو
شمع سی جھلملائی جاتی ہے

تیری ہر ایک بات میں احسانؔ
اک نہ اک بات پائی جاتی ہے
 Ghazal
Hum Se Ulfat Jatai Jati Hai
Be-qarari badhai jati hai

Dekh kar un ke lab pe khanda-e-nur
Nind si gham ko aai jati hai

Gham-e-ulfat ke kar-khane mein
Zindagi jagmagai jati hai

Un ki chashm-e-karam pe naz na kar
Yun bhi hasti miTai jati hai

Bazm mein dekh rang-e-amad-e-dost
Raushni thartharai jati hai

Dekh ai dil wo uth rahi hai naqab
Ab nazar aazmai jati hai

Un ke jate hi kya hua dil ko
Shama si jhilmilai jati hai

Teri har ek baat mein ‘ehsan’
Ek na ek baat pai jati hai

اپنا تبصرہ بھیجیں