Bulandi Dair Tak Kis Shakhs Ke Hissay Mein Rehti

Bulandi Dair Tak Kis Shakhs Ke Hissay Mein Rehti

Bulandi Dair Tak Kis Shakhs Ke Hissay Mein Rehti Hai
Bahut onchi amarat har ghari khtaray mein rehti hai

Bahut jee chahata hai qaid-e-jaan se nikal jaye
Tumhari yaad bhi lekin Isi malbay mein rehti hai

Yeh aisa qarz hai jo mein ada kar hi nahi sakta
Mein jab tak ghar na lauton meri maa sajday mein rehti hai

Ameeri rasham-o-kam khawab mein tang nazar ai
Gharebi shan se aik taat ke parday mein rehti hai

Mein insan hoon behak jana meri fitrat mein shamil hai
Hawa bhi us ko cho’oh kar dair tak nashay mein rahti hai

Mohabbat mein parakhne janchne se faida kia hai
Kami thori bahut har aik ke shajre mein rahti hai

Yeh apne ap ko taqseem kar leta hai sobon mein
Kharabi bas yahi har mulk ke naqshay mein rahti hai

Bulandi Dair Tak Kis Shakhs Ke Hissay Mein Rehti Hai
Bahut onchi amarat har ghari khtaray mein rehti hai
غزل
بلندی دیر تک کس شخص کے حصے میں رہتی ہے
بہت اونچی عمارت ہر گھڑی خطرے میں رہتی ہے

بہت جی چاہتا ہے قیدِ جاں سے ہم نکل جائیں
تمہاری یاد بھی لیکن اسی ملبے میں رہتی ہے

یہ ایسا قرض ہے جو میں ادا کر ہی نہیں سکتا
میں جب تک گھر نہ لوٹوں میری ماں سجدے میں رہتی ہے

امیری ریشم و کم خواب میں ننگی نظر آئی
غریبی شان سے اک ٹاٹ کے پردے میں رہتی ہے

میں انساں ہوں بہک جانا مری فطرت میں شامل ہے
ہوا بھی اس کو چھو کر دیر تک نشے میں رہتی ہے

محبت میں پرکھنے جانچنے سے فائدہ کیا ہے
کمی تھوڑی بہت ہر ایک کے شجرے میں رہتی ہے

یہ اپنے آپ کو تقسیم کر لیتا ہے صوبوں میں
خرابی بس یہی ہر ملک کے نقشے میں رہتی ہے

بلندی دیر تک کس شخص کے حصے میں رہتی ہے
بہت اونچی عمارت ہر گھڑی خطرے میں رہتی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں