Wo Ehad Tum Ne Toorr Diya Jis Pe Be Shumaar

Wo Ehad Tum Ne Toorr Diya Jis Pe Be Shumaar

Wo Ehad Tum Ne Toorr Diya Jis Pe Be Shumaar
Pichle pehar ke dobte tare gawah thay

Ab jo bhi keh rahe ho baja hai durust hai
Hum kaj khayal-o-kaj sukhun nigaah thay

Ba wasf ehtiyat-o-be aai tajarbaat daher
Mehsoos ho raha hai keh gum karda rah thay

Lekin hai dil ko sabar, khula hai yeh jab se raaz
Tum bais-e-gunah nahi thay gunah thay

Wo ehad tum ne toorr diya jis pe be shumaar
Pichle pehar ke dobte tare gawah thay
غزل
وہ عہد تم نے توڑ دیا جس پہ بیشمار
پچھلے پہر کے ڈوبتے تارے گواہ تھے

اب جو بھی کہہ رہے ہو بجا ہے درست ہے
ہم کج خیال وکج سخن و کج نگاہ تھے

با وصف احتیاظ و بے ایں تجربات دہر
محسوس ہو رہا ہے کہ گم کردہ راہ تھے

لیکن ہے دل کو صبر، کھلا ہے یہ جب سے راز
تم باعثِ گناہ نہیں تھے گناہ تھے

وہ عہد تم نے توڑ دیا جس پہ بیشمار
پچھلے پہر کے ڈوبتے تارے گواہ تھے

اپنا تبصرہ بھیجیں