Tera Jamal Tera Hussan Kamgaar Rahe

Tera Jamal Tera Hussan Kamgaar Rahe

Tera Jamal Tera Hussan Kamgaar Rahe
Wo kya kare na jisay dil pe ikhtiyar rahe

Hazar kasrat raaana ne chilmanen dalin
Bahar hijab-e- taayyun wo ashkar rahe

Meri nazar ka tou kya zikar khud bahar ke phool
Faraib khurda-e- rangini bahar rahe

Kisi muqaam pe dil ko sukoon ho kya maani
Jo be qarar-e-azal hai wo be qarar rahe

Usi nawah mein ahl-e-nazar bhi mumkin hain
Kuch aur dair sar-e-tour intizar rahe

Tamam phool thay aur zarf-e-daman gulcheen
Jo bach gaye wo chiragh-e-shab bahar rahe

Meri nigaah mein hai wo harim zebai
Kaneez ban ke jahan Maryam-e-bhar rahe

Khizaan khizaan ho tu daur-e-bahar kya maani
Bahar ho tu khizaan kyu bane bahar rahe

Jahane-e-hussan ke asrar pa nahi sakta
Jo ishq apni hadon taak hi be qarar rahe

Meri nazar se wo jalwa na reh sakay msatoor
Jo zer-e-parda perahan bahar rahe

Chhirra chukka hoon mein dast-e-majaz se daman
Haqiqat apne hijaboon se hooshiyar rahe

Mein morta hoon usi rukh se karwan apna
Kochah aur dair ufuq par abhi ghubaar rahe

Junoon-e-shoq mein tehqeeq-e-rang-o- bu kaisi
Rahe chaman mein tu dewana-e-bahar rahe

Hain es tarha ke zawabit bhi be qarari mein
Keh tere saath zamana bhi be qarar rahe

Wo sirf mere hain ehsan mein faqt un ka
Rahe chaman mein tou dewana bahar rahe
Hai nagawaar kisi ko tou nagawaar rahe

Tera jamal tera hussan kamgaar rahe
Wo kya kare na jisay dil pe ikhtiyar rahe
غزل
تراجمال ترا حسن کامگار رہے
وہ کیا کرے نہ جسے دل پہ اختیار رہے

ہزار کثرت رعنا نے چلمنیں ڈالیں
بہر حجاب تعین وہ اشکار رہے

مری نظر کا تو کیا ذکر خود بہار کے پھول
فریب خوردہ رنگینی بہار رہے

کسی مقام پہ دل کو سکوں ہو کیا معنی
جو بے قرار ازل ہے وہ بے قرار رہے

اسی نواح میں اہل نظر بھی ممکن ہیں
کچھ اور دیر سر طور انتظار رہے

تمام پھول تھے اور ظرف دامن گلچیں
جو بچ گئے وہ چراغ شب بہار رہے

مری نگاہ میں ہے وہ حریم زیبائی
کنیز بن کے جہاں مریم بہار رہے

خزاں خزاں ہو تو دور بہار کیا معنی
بہار ہو تو خزاں کیوں بنے بہار رہے

جہان حسن کے اسرا پا نہیں سکتا
جو عشق اپنی حدوں تک ہی بے قرار رہے

مری نظر سے وہ جلوے نہ رہ سکے مستور
جو زیر پردہ پیراہن بہار رہے

چھڑا چکا ہوں میں دست مجاز سے دامن
حقیقت اپنے حجابوں سے ہوشیار رہے

میں موڑتا ہوں اسی رخ سے کارواں اپنا
کچچ اور دیر افق پر ابھی غبار رہے

جنوں شوق میں تحقیق رنگ وبو کیسی
رہے چمن میں تو دیوانہ بہار رہے

ہیں اس طرح کے ضوابط بھی بے قراری میں
کہ تیرے ساتھ زمانہ بھی بے قرار رہے
وہ صرف میرے ہیں احسان میں فقط ان کا

رہے چمن میں تو دیوانۂ بہار رہے
ہے ناگوار کسی کو تو ناگور رہ

اپنا تبصرہ بھیجیں