Dil Ka Kya Hai Wo To Chahega Musalsal Milna

غزل
دل کا کیا ہے وہ تو چاہے گا مسلسل ملنا
وہ ستم گر بھی مگر سوچے کسی پل ملنا
 
واں نہیں وقت تو ہم بھی ہیں عدیم الفرصت
اس سے کیا ملیے جو ہر روز کہے کل ملنا
 
عشق کی رہ کے مسافر کا مقدر معلوم
شہر کی سوچ میں ہو اور اسے جنگل ملنا
 
اس کا ملنا ہے عجب طرح کا ملنا جیسے
دشت امید میں اندیشے کا بادل ملنا
 
دامن شب کو اگر چاک بھی کر لیں تو کہاں
نور میں ڈوبا ہوا صبح کا آنچل ملنا
Ghazal
Dil Ka Kya Hai Wo To Chahega Musalsal Milna
Wo sitamgar bhi magar soche kisi pal milna

Wan nahin waqt to hum bhi hain adim-ul-fursat
Us se kya miliye jo har roz kahe kal milna

Ishq ki rah ke musafir ka muqaddar malum
Shahr ki soch mein ho aur use jangal milna

Us ka milna hai ajab tarah ka milna jaise
Dasht-e-ummid mein andeshe ka baadal milna

Daman-e-shab ko agar chaak bhi kar lin to kahan
Nur mein duba hua subh ka aanchal milna

Dil Ka Kya Hai Wo To Chahega Musalsal Milna
Wo sitamgar bhi magar soche kisi pal milna

اپنا تبصرہ بھیجیں