Jabeen Ki Dhool Jigar Ki Jalan Chupaye Ga

Jabeen Ki Dhool Jigar Ki Jalan Chupaye Ga

Jabeen Ki Dhool Jigar Ki Jalan Chupaye Ga
Shoro ishq hai wo fitratan chupaye ga

Damak rha hai jo nas nas ki tishnagi se badan
Es aag ko na tera perahan chupaye ga

Tera elaaj shifagaah asar nu mein nahi
Khard ke ghaon tu dewana pan chupayen ga

Hisaar zabat hai abar rawan ki par chayein
Malal roh ko kab tak badan chupaye ga

Nazar ka fard amal se hai silsila dar-kaar
Yaqeen na kar yeh sipahi kafan chupaye ga

Kise khabar thi keh yeh dawar khud gharz ek din
Junon se qeemat-daar-o-rasan chupaye ga

Tera ghubar zameen pe utarne wala hai
Kahan tak ab yeh bagolah thakan chupaye ga

Khulaye ga bad-e-nafs se jo rukh pe neel kanwal
Usay kahan tera ujlaa badan chupaye ga

Tere kamal ke dhabay tere urooj ke daagh
Chupaye ga tu koi ahl-e-fan chupaye ga

Jise hai faiz mere khanqah se Danish
Wo kis tarha mera rang sukhan chupaye ga

Jabeen ki dhool jigar ki jalan chupaye ga
Shoro ishq hai wo fitratan chupaye ga
غزل
جبیں کی دھول جگر کی جلن چھپائے گا
شروع عشق ہے وہ فطرتاً چھپائے گا

دمک رہا ہے جو نس نس کی تشنگی سے بدن
اس آگ کو نہ ترا پیرہن چھپائے گا

ترا علاج شفا گاہ عصر نو میں نہیں
خرد کے گھاؤ تو دیوانہ پن چھپائے گا

حصار ضبط ہے ابر رواں کی پرچھائیں
ملال روح کو کب تک بدن چھپائے گا

نظر کا فرد عمل سے ہے سلسلہ درکار
یقیں نہ کر یہ سپاہی کفن چھپائے گا

کسے خبر تھی کہ یہ دور خود غرض اک دن
جنوں سے قیمت دار و رسن چھپائے گا

ترا غبار زمیں پر اترنے والا ہے
کہاں تک اب یہ بگولہ تھکن چھپائے گا

کھلے گا باد نفس سے جو رخ پہ نیل کنول
اسے کہاں ترا اجلا بدن چھپائے گا

ترے کمال کے دھبے ترے عروج کے داغ
چھپائے گا تو کوئی اہل فن چھپائے گا

جسے ہے فیض مری خانقاہ سے دانشؔ
وہ کس طرح مرا رنگ سخن چھپائے گا

جبیں کی دھول جگر کی جلن چھپائے گا
شروع عشق ہے وہ فطرتاً چھپائے گا

اپنا تبصرہ بھیجیں