Jo Khiyal Thy Na Qayas Thy

غزل
جو خیال تھے نہ قیاس تھے وہی لوگ مجھ سے بچھڑ گئے
جو محبتوں کی اساس تھے وہی لوگ مجھ سے بچھڑ گئے
 
جنہیں مانتا ہی نہیں یہ دل وہی لوگ میرے ہیں ہم سفر
مجھے ہر طرح سے جو راس تھے وہی لوگ ہم سے بچھڑ گئے
 
مجھے لمحہ بھر کی رفاقتوں کے سراب اور ستائیں گے
مری عمر بھر کی جو پیاس تھے وہی لوگ مجھ سے بچھڑ گئے
 
یہ خیال سارے ہیں عارضی یہ گلاب سارے ہیں کاغذی
گلِ آرزو کی جو باس تھے وہی لوگ مجھ سے بچھڑ گئے
 
جنہیں کر سکا نہ قبول میں وہ شریک راہِ سفر ہوئے
جو مرے طلب مری آس تھے وہی لوگ مج سے بچھڑ گئے
 
مری دھڑکنوں کے قریب تھے مری چاہ تھے مرا خواب تھے
وہ جو روز و شب مرے پاس تھے وہی لوگ مجھ سے بچھڑ گئے
Ghazal
Jo Khiyal Thy Na Qayas Thy Wohi Log Mujh Se Bichar Gye
Jo muhabbtoon ki assass thy wohi log mujh se bichar gye

Jinhein manta hi nahi yeh dil wohi log hain mere hamsafar
Mujhe her tarha se jo raas thy wohi log mujhe se bichar gye

Mujhe lamha bhar ki rafaqatoon k sharab aor sataein gein
Meri umer bhar ki jo pyas thy wohi log mujh se bichar gye

Yeh khiyal sarey hain aarzi yeh gulab sarey hain aarzi
Gul e arzo ki jo baas thy wohi log mujh se bichar gye

Jinhein kr saka na qabool mein who shareeq rah e safar huwey
Jo meri talab meri aass thy wohi log mujh se bichaar gye

Meri dharkanoon k qareeb thy meri chah thy mera khuwab thy
Woh jo rooz o shab mere pass thy wohi log mujh se bichar gye

اپنا تبصرہ بھیجیں