Sirf Khanjar Hi Nahi Aankhon Mein Pani Chahiye

صرف خنجر ہی نہیں آنکھوں میں پانی چاہئے
اے خدا دشمن بھی مجھ کو خاندانی چاہئے
شہر کی ساری الف لیلائیں بوڑھی ہو چکیں
شاہزادے کو کوئی تازہ کہانی چاہئے
میں نے اے سورج تجھے پوجا نہیں سمجھا تو ہے
میرے حصے میں بھی تھوڑی دھوپ آنی چاہئے
میری قیمت کون دے سکتا ہے اس بازار میں
تم زلیخا ہو تمہیں قیمت لگانی چاہئے
زندگی ہے اک سفر اور زندگی کی راہ میں
زندگی بھی آئے تو ٹھوکر لگانی چاہئے
میں نے اپنی خشک آنکھوں سے لہو چھلکا دیا
اک سمندر کہہ رہا تھا مجھ کو پانی چاہئے
sirf khanjar hi nahin aankhon mein pani chahiye

ai khuda dushman bhi mujh ko khandani chahiye

shahr ki sari alif-lailaen budhi ho chukin

shahzade ko koi taza kahani chahiye

main ne ai suraj tujhe puja nahin samjha to hai

mere hisse mein bhi thodi dhup aani chahiye

meri qimat kaun de sakta hai is bazar mein

tum zulekha ho tumhein qimat lagani chahiye

zindagi hai ek safar aur zindagi ki rah mein

zindagi bhi aae to thokar lagani chahiye

main ne apni khushk aankhon se lahu chhalka diya

ek samundar kah raha tha mujh ko pani chahiye

اپنا تبصرہ بھیجیں