Apni Tanhai Mere Naam Peh Aabad Kare

Apni Tanhai Mere Naam Peh Aabad Kare

Apni Tanhai Mere Naam Peh Aabad Kare
Kon hoga jo mujhe uss ki tarah yad kare

Dil ajab shahr keh jis par bhi khula dar uss ka
Woh musafir usay har simt se barbaad kare

Apne qatil ki zehanat se parishan hoon mein
Rooz ik mout naye tarz ki ijad kare

Itna heraan ho meri be talbi ke aagay
Wa qafas mein koi dar khud mera Sayyad kare

Salab benaai ke ahkam mile hain jo kabhi
Roshni choone ki khwahish koi shab zad kare

Soch rakhna bhi jarayam mein hai shamil ab to
Wohi masoom hai har baat peh jo saad kare

Jab lahoo bol pare uss ki gawahi ke khilaf
Qazi-e-shahr kuchh uss bat mein irshad kare

Uss ki miti mein bohat rooz raha mere wajood
Mere sahir se kaho ab mujhe aazad kare

Apni tanhai mere naam peh aabad kare
Kon hoga jo mujhe uss ki tarah yad kare
غزل
اپنی تنہائی مرے نام پہ آباد کرے
کون ہوگا جو مجھے اُس کی طرح یاد کرے

دل عجب شہر کہ جس پر بھی کھلا در اُس کا
وہ مسافر اُسے ہر سمت سے برباد کرے

اپنے قاتل کی ذہانت سے پریشان ہوں میں
روز اک موت نئے طرز کی ایجاد کرے

اتنا حیراں ہو مری بے طلبی کے آگے
وا قفس میں کوئی در خود میرا صیاد کرے

سلب بینائی کے احکام ملے ہیں جو کبھی
روشنی چھونے کی خواہش کوئی شب زاد کرے

سوچ رکھنا بھی جرائم میں ہے شامل اب تو
وہی معصوم ہے ہر بات پہ جو صاد کرے

جب لہو بول پڑے اس کی گواہی کے خلاف
قاضیِ شہر کچھ اس بات میں ارشاد کرے

اُس کی مٹی میں بہت روز رہا میرا وجود
میرے ساحر سے کہو اب مجھے آزاد کرے

اپنی تنہائی مرے نام پہ آباد کرے
کون ہوگا جو مجھے اُس کی طرح یاد کرے

اپنا تبصرہ بھیجیں