Agar Tumhari Bhi Khwahish Hai Inhidaam Mera

Agar Tumhari Bhi Khwahish Hai Inhidaam Mera

Agar Tumhari Bhi Khwahish Hai Inhidaam Mera
To aao hath bataao yahi hai kaam mera

Baghawaten hain bad amni hai shor-o-shar hain wahan
Hai jo ilaqa tere zair-e-intizam mera

Bhari hain shahr mein dil tootnay ki aawazen
Woh lay rahi hai zamanay se intiqam mera

Chal ab bhugat keh mujhe kha chukka ghamoon ka hujoom
Hazar baar kaha tha keh hath thaam mera

Woh mere naam peh karwat zaroor badlay ga
Agar nah badlay to be shak badal de naam mera

Mein uss se rafat ka aaghaz kar chukka hoon umair
Keh jis ke hath se hona hai ihtimaam mera

Agar tumhari bhi khwahish hai inhidaam mera
To aao hath bataao yahi hai kaam mera
غزل
اگر تمہاری بھی خواہش ہے انہدام میرا
تو آؤ ہاتھ بٹاؤ یہی ہے کام میرا

بغاوتیں ہیں، بد امنی ہے ، شور و شر ہیں وہاں
ہے جو علاقہ تیرے زیرِ انتظام میرا

بھری ہیں شہر میں دل ٹوٹنے کی آوازیں
وہ لے رہی ہے زمانے سے انتقام میرا

چل اب بھگت کہ مجھے کھا چکا غموں کا ہجوم
ہزار بار کہا تھا کہ ہاتھ تھام میرا

وہ میرے نام پہ کروٹ ضرور بدلے گا
اگر نہ بدلے تو بے شک بدل دے نام میرا

میں اُس سے رفت کا آغاز کار چکا ہوں عمیر
کہ جس کے ہاتھ سے ہونا ہے اہتمام میرا

اگر تمہاری بھی خواہش ہے انہدام میرا
تو آؤ ہاتھ بٹاؤ یہی ہے کام میرا
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں