Gira Den Zabat Ki Unchi Faslen, Tum Ko Kia

Gira Den Zabat Ki Unchi Faslen, Tum Ko Kia

Gira Den Zabat Ki Unchi Faslen, Tum Ko Kia
Ya apna daman-e-sad chaak si len tum ko kia

Tum apne marhami lehje ko apne pass rakho
Hamare zakhm hain chhelen nah chhelen tum ko kia

Hamein hi dasht se rughbat bala ki ho gai hai
Aur ab hai khushk yeh aankhon ki jheelen tum ko kia

Apne haq mein ki ik baat bhi nahi maano
Mein mustard karon sari daleelen tum ko kia

Tumhari yaadon ki tasveer tangnay ke liye
Badan mein gar ki rakh don yeh kelen tum ko kia

Tumahri apni hi duniya hai khush raho uss mein
Hamara kia hai merin chahe ji len tum ko kia

Gira den zabat ki unchi faslen, tum ko kia
Ya apna daman-e-sad chaak si len tum ko kia
غزل
گرا دیں ضبط کی اُونچی فصلیں ، تم کو کیا
یا اپنا دامنِ صد چاک سی لیں ، تم کو کیا

تم اپنے مرہمی لہجے کو اپنے پاس رکھو
ہمارے زخم ہیں ، چھیلیں نہ چھیلیں تم کو کیا

ہمیں ہی دشت سے رغبت بلا کی ہو گئی ہے
اور اب ہیں خشک یہ آنکھوں کی جھیلیں تم کو کیا

اپنے حق میں کی اک بات بھی نہیں مانوں
میں مسترد کروں ساری دلیلیں تم کو کیا

تمہاری یادوں کی تصویر ٹانگنے کےلیے
بدن میں گاڑ کے رکھ دوں یہ کیلیں تم کو کیا

تمہاری اپنی ہی دنیا ہے خوش رہو اُس میں
ہمارا کیا ہے مریں چاہے جی لیں ، تم کو کیا

گرا دیں ضبط کی اُونچی فصلیں ، تم کو کیا
یا اپنا دامنِ صد چاک سی لیں ، تم کو کیا
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں