Dil Aisay Shahr Ke Pamal Ho Jane Ka| Poetry

Dil Aisay Shahr Ke Pamal Ho Jane Ka| Poetry

Dil Aisay Shahr Ke Pamal Ho Jane Ka
Manzar bholne mein bhi kuch din lagenge

Jahan rang ke sare khas-o-khashaak sab sar-o-sanobar
Bholne mein abhi kcuh din lagenge

Thake hare howay khwabon ke sahil par
kahin umeed ka chota sa ik ghar

Bante bante reh geya hai
Wo ik ghar bholne mein abhi kuch din lagenge
Magar ab din bhi kitne reh gaye hain

Bas ik din dil ki loh muntazir par achanak
Raat utare gi
Meri be noor aankhon ke khazane mein

chupe har khwab ki takmeel karde gi
Mujhe bhi khwab mein tabdeel karde gi

Ek aisa khwab jis ka dekhna mumkin nahi tha
Ek aisa khwab jis ke daman sd chaak mein koi Mubarak
Koi roshan din nahi tha

Abhi kuch din lagenge
Dil aisay shahr ke pamal ho jane ka
Manzar bholne mein bhi kuch din lagenge
نظم
دل ایسے شہر کے پامال ہو جانے کا
منظر بھولنے میں ابھی کچھ دن لگیں گے

جہان رنگ کے سارے خس و خاشاک سب سر وصنوبر
بھولنے میں ابھی کچھ دن لگیں گے
تھکے ہارے ہوئے خوابوں کے ساحل پر کہیں امید کا چھوٹا
سا اک گھر
بنتے بنتے رہ گیا ہے

وہ اک گھر بھولنے میں ابھی کچھ دن لگیں گے
مگر اب دن بھی کتنے رہ گئے ہیں
بس اک دن دل کی لوح منتظر پر اچانک
رات اترے گی

میری بے نور آنکھوں کے خزانے میں چھپے ہر خواب کی تکمیل کر دے گی
مجھے بھی خواب میں تبدیل کر دے گی

اک ایسا خواب جس کا دیکھنا ممکن نہیں تھا
اک ایسا خواب جس کے دامن صد چاک میں کوئی مبارک

کوئی روشن دن نہیں تھا
ابھی کچھ دن لگیں گے

دل ایسے شہر کے پامال ہو جانے کا
منظر بھولنے میں ابھی کچھ دن لگیں گے

اپنا تبصرہ بھیجیں