Hijar Ke Mausam Tanhai Ke Dukh Dekhe| Dukhi Shayari

Hijar Ke Mausam Tanhai Ke Dukh Dekhe | Shayari

Hijar Ke Mausam Tanhai Ke Dukh Dekhe
Ik chehre ke pechay kitne dukh dekhe

Ik sannata pehrun Khoon rulata hai
Ak aawaz ki khatir kaise dukh dekhe

Mein bhi apni zaat mein tanhaa phirta hoon
Tum ne bhi be khwab raaton ke dukh dekhe

Jin bachon ne hansana bhi na sikha tha
Un bachon ne sab se pehle dukh dekhe

Tum ko dekha hai to yeh mehsoos howa
Kaise murjhate hain chehre dukh dekhe

Hum dono ne ek dojay ko jan liya
Hum dono ne ik dojay ke dukh dekhe

Jis ko jeena hai duniya mein dastooran
Lazim hai woh sab se pehle dukh dekhe

Ab logon ke chehron par yeh likha hai
Un logon ne sukh ke badle dukh dekhe

Hum logon ka bachpan kaisa bachpan tha
Hum logon ne kaise kaise dukh dekhe

Raat gaye tak mein ne us ki yaadon mein
Jaise shear likhay thay waise dukh dekhe

Danish kaisa karb chupaye phirta hai
Shear kahe raaton ko jagay dukh dekhe

Danish hum ne jis rut mein jeena seekha
Woh rut guzri sapne totay dukh dekhe

Hijar ke mausam tanhai ke dukh dekhe
Ik chehre ke pechay kitne dukh dekhe
غزل
ہجر کے موسم تنہائی کے دکھ دیکھے
اک چہرے کے پیچھے کتنے دکھ دیکھے

اک سناٹا پہروں خون رلاتا ہے
اک آواز کی خاطر کیسے دکھ دیکھے

میں بھی اپنی ذات میں تنہا پھرتا ہوں
تم نے بھی بے خواب راتوں کے دکھ دیکھے

جن بچوں نے ہنسنا بھی نہ سیکھا تھا
ان بچوں نے سب سے پہلے دکھ دیکھے

تم کو دیکھا ہےتو یہ محسوس ہو ا
کیسے مرجھاتے ہیں چہرے دکھ دیکھے

ہم دونوں نے اک دوجے کو جان لیا
ہم دونوں نے اک دوجے کے دکھ دیکھے

جس کو جینا ہے دنیا میں دستوراّ
لازم ہے وہ سب سے پہلے دکھ دیکھے

اب لوگوں کے چہروں پر یہ لکھا ہے
ان لوگوں نے سکھ کے بدلے دکھ دیکھے

ہم لوگوں کا بچپن کیسا بچپن تھا
ہم لوگوں نےکیسے کیسے دکھ دیکھے

رات گئے تک میں نے اس کی یادوں میں
جیسے شعر لکھے تھے ویسے دکھ دیکھے

دانش کیسا کرب چھپائے پھرتا ہے
شعر کہے راتوں کو جاگے دکھ دیکھے

دانش ہم نے جس رت میں جینا سیکھا
وہ رت گزری سپنے ٹوٹے دکھ دیکھے

ہجر کے موسم تنہائی کے دکھ دیکھے
اک چہرے کے پیچھے کتنے دکھ دیکھے

اپنا تبصرہ بھیجیں