Jaisa Hoon Waisa Kyu Hoon Samjha

Jaisa Hoon Waisa Kyu Hoon Samjha

Jaisa Hoon Waisa Kyu Hoon Samjha Sakta Tha Mein
Tum ne pucha tu hota batla sakta tha mein

Asooda rehne ki khwahish maar gai warna
Aagy aur bahut aagy tak ja sakta tha mein

Choti moti ek lehr hi thi mere andar
Ek lehr se kia toofan utha sakta tha mein

Kahin Kahin se kuch misray ek adha ghazal kuch sher
Ek punji par kitna shoor macha sakta tha mein

Jise sab likhte rehte hain ghazlen , nazmen geet
Waise likh likh kar anbar laga sakta tha mein

Jisa hoon waisa kyu hoon samjha sakta tha mein
Tum ne pucha tu hota batla sakta tha mein
غزل
جیسا ہوں ویسا کیوں ہوں سمجھا سکتا تھا میں
تم نے پوچھا تو ہوتا بتلا سکتا تھا میں

آسودہ رہنے کی خواہش مار گئی ورنہ
آگے اور بہت آگے تک جا سکتا تھا میں

چھوٹی موٹی ایک لہر ہی تھی میرے اندر
ایک لہر سے کیا طوفان اُٹھا سکتا تھا میں

کہیں کہیں سے کچھ مصرعے ایک آدھ غزل کچھ شعر
اس پونجی پر کتنا شور مچا سکتا تھا میں

جیسے سب لکھتے رہتے ہیں غزلیں نظمیں گیت
ویسے لکھ لکھ کر انبار لگا سکتا تھا میں

جیسا ہوں ویسا کیوں ہوں سمجھا سکتا تھا میں
تم نے پوچھا تو ہوتا بتلا سکتا تھا میں

اپنا تبصرہ بھیجیں