Jo Bhalay Gumaan Nah De Sakay Unhein Vote Dein

Jo Bhalay Gumaan Nah De Sakay Unhein Vote Dein

Jo Bhalay Gumaan Nah De Sakay Unhein Vote Dein
Hamein koi maan nah de sakay unhein vote dein

Hamein aasman ki chat taley para dekh kar
Koi saibaan nah de sakay unhein vote dein

Mere nohay karb ke reh gaye sabhi be zubaan
Jo unhein zuban nah de sakay unhein vote dein

Hamein la ke patkha hawaye waqt ne shakh se
Unhein vote den jo nai udaan nah de sakay

Sabhi maiyaton ko supurd pani ke kar diya
Jo kafan ka thaan nah de sakay unhein vote dein

Jo bhalay gumaan nah de sakay unhein vote dein
Hamein koi maan nah de sakay unhein vote dein
غزل
جو بھلے گمان نہ دے سکے اُنہیں ووٹ دیں
ہمیں کوئی مان نہ دے سکے اُنہیں ووٹ دیں

ہمیں آسمان کی چھت تلے پڑا دیکھ کر
کوئی سائبان نہ دے سکے اُنہیں ووٹ دیں

مرے نوحے کرب کے رہ گئے سبھی بے زباں
جو اُنہیں زبان نہ دے سکے اُنہیں ووٹ دیں

ہمیں لا کے پٹخا ہوائے وقت نے, شاخ سے
اُنہیں ووٹ دیں جو نئی اُڑان نہ دے سکے

سبھی میتوں کو سپرد پانی کے کردیا
جو کفن کا تھان نہ دے سکے اُنہیں ووٹ دیں

جو بھلے گمان نہ دے سکے اُنہیں ووٹ دیں
ہمیں کوئی مان نہ دے سکے اُنہیں ووٹ دیں
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں